مباحث (37)

  وقت اشاعت: 3 دن پہلے 

ہم ایک تماشا گاہ میں رہتے ہیں اوراس تماشاگاہ کو اسلامی جمہوریہ پاکستان کہتے ہیں۔ ہمارا المیہ یہ ہے کہ ہم تماشائی ہونے کے باوجود تماشائی نہیں ہیں۔ تماشائی بھی دراصل تماشا دکھانے والے خود ہیں۔ ہمیں گمان ہے کہ ہم یہاں تماشہ دیکھنے کے لیے آئے۔ لیکن حقیقت یہ ہے کہ ہمیں اس تماشا گاہ میں تماشا بننے کے لیے دھکیلا گیا۔ تماشا بھی ایسا کہ جس میں ہرمداری اپنے اپنے فن کا بھرپور مظاہرہ کررہاہے۔ کوئی ہاتھ چھوڑ کر سائیکل چلاتا ہے۔ تو کوئی بندوق چلائے بغیر گولی مارنے کے ہنر سے واقف ہے۔ شاہ دولا کے بہت سے چوہوں نے اپنے سروں پر دستاریں سجارکھی ہیں۔ کچھ غلام اپنی حکمرانی کاتماشہ دکھا رہے ہیں اور حکمران خادموں کا روپ دھارکر رعایا کا تماشہ دیکھنے میں مصروف ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 7 دن پہلے 

کرکٹ سے ہماری دلچسپی ختم ہوچکی تھی۔ شدید غصہ تھا اور جھنجھلاہٹ تھی۔ ہم نے نیوز چینلز کی طرح سپورٹس چینل بھی دیکھنا چھوڑ دیئے تھے۔ کوئی میچ ہوتا توہمیں یہ دلچسپی ہی نہیں رہی تھی کہ کون جیتے گا اور کون ہارے گا۔ ہماری یہ دلچسپی ایک دن میں ختم نہیں ہوئی تھی۔ اس غصے اور جھنجھلاہٹ اور عدم دلچسپی کے پیچھے بہت سے عوامل کارفرما تھے۔ کھیل جب جوئے میں تبدیل ہوااور کھلاڑیوں اور جواریوں کا نام ایک ساتھ لیا جا نے لگا ۔ میچ فکسنگ معمول بن گئی اور میچ سے ایک دن پہلے ہی بچوں کوبھی معلوم ہونے لگا کہ نتیجہ کس کے حق میں آئے گا تو بہت سے لوگوں کی اس کھیل سے دلچسپی ختم ہو گئی ۔ بکیوں نے اس خوبصورت کھیل کو ایسا برباد کیا کہ میچ دیکھنا وقت کا ضیاع لگنے گا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 18 جون 2017

اور آخرکار وہ لمحہ آگیا جب ملک کا منتخب وزیراعظم جے آئی ٹی(مشترکہ تحقیقاتی ٹیم) کے روبرو پیش ہوگیا۔ یہ کوئی عدالت نہیں تھی، ایک تفتیشی ٹیم تھی جسے میڈیا نے عدالت بنارکھا تھا اور وزیراعظم کی پیشی کو غیرمعمولی اہمیت دی جارہی تھی۔ ہمارے ہاں مقتدر شخصیات کا کسی تفتیشی ٹیم کے سامنے پیش ہونا بہرحال غیرمعمولی ہی ہے کہ وطن عزیز میں کوئی ایسی روایت بھی تو موجودنہیں۔

مزید پڑھیں

loading...

  وقت اشاعت: 07 جون 2017

ملتان میں رہ کر گرمی کا شکوہ کرنا کوئی مناسب معلوم نہیں ہوتا۔ جس شہر کی پہچان ہی گردوگرما ہواور اس کے بعد گورستان کا تذکرہ ہو وہاں کے باسیوں کو گرمی پر حیرت بھی نہیں ہونی چاہیے اوراس کی حدت و شدت پر کسی قسم کی پریشانی بھی لاحق نہیں ہونی چاہیے۔ لیکن اس کا کیا کریں کہ آج کل شہر میں گرمی کے سوا کوئی سرگرمی ہی نہیں۔ صبح سے شام تک ہم سب کمروں میں دبکے رہتے ہیں اور باربار اپنے موبائل فون پر درجہ حرارت معلوم کرکے آہیں بھرتے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 30 مئی 2017

انیس برس قبل 28 مئی 1998 کو چاغی کے مقام پر ایٹمی دھماکوں کے بعد ہمارا شمار دنیا کی ایٹمی طاقتوں میں ہونے لگا۔ پوری قوم نعرے لگاتی اور بھنگڑے ڈالتی ہوئی سڑکوں پر نکل آئی۔ ہمیں بتایا گیا کہ ہم اب ناقابلِ تسخیر ہو گئے ہیں۔ ہماری جانب آنکھ اٹھانے کی جرات تو خیر دشمن نے پہلے بھی کبھی نہ کی تھی بس یہی ہوا تھا کہ وہ ہمارے ایک حصے پر قابض ہونے کے بعد ہمارے 90 ہزار فوجیوں کو قیدی بنانے میں کامیاب ہو گیا تھا ۔ لیکن یہ اس وقت کی بات تھی جب ہم ایٹمی طاقت نہیں تھے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 26 مئی 2017

بخدمت جناب ڈونلڈ ٹرمپ صاحب بہادر
 صدر متحدہ ریاست ہائے امریکا
 سربراہ عرب امریکا سربراہی کانفرنس و
 سرپرست اعلیٰ دنیائے عرب
 جناب عالی ۔۔ گزارش ہے کہ فدوی سب سے پہلے تو اس بات کا اعتراف کرتا ہے کہ وہ اپنی کم عقلی ، کم فہمی اورکم علمی کی بنا پر عالی مرتبت کے بارے میں بہت سی غلط فہمیوں کاشکار رہا جس پر وہ ندامت کااظہار ضروری سمجھتا ہے۔ اب جب کہ یہ غلط فہمیاں دور ہو گئی ہیں تو فدوی پہلی فرصت میں اس فروگذاشت پر آپ سے دست بستہ معافی کاخواستگارہے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 20 مئی 2017

دوسری جنگ عظیم کے خاتمہ کے بعد غالب ا ور فاتح اقوام نے مل کر جنگی زبوں حالی کا شکار ہستی بستی انسانی آبادیوں کو ویرانیوں اور کھنڈرات میں تبدیل کیا۔ اور اُن پر تعمیر و ترقی کے محلات تعمیرات کرنے کا  منفرد اور مخصوص پلان تیار کیا تھا۔ تاہم اُس میں اس بات کا خاص طور پر خیال رکھا گیا تھا کہ عالمی سیاست و معیشت کو اس طرح پروان چڑھایا جائے کہ اس کے فوائد و ثمرات سے صرف چند بڑے اور مال دار ممالک ہی مستفید ہوسکیں۔ چھوٹے اور غریب ممالک صرف آہوں اور سسکیوں پر ہی گزارہ کریں ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 17 مئی 2017

گزشتہ چند صدیوں سے معاشی ، اقتصادی اور صنعتی ترقی کی جو بین الاقوامی دوڑ شروع ہوئی ہے اِس وقت عوامی جمہوریہ چین اُس میں نہایت ہی برق رفتاری کے ساتھ اُبھر کر سامنے آرہا ہے۔ اور پوری دُنیا کی صنعت و تجارت پر قبضہ کرنے کے لئے آئے روز نت نئے راستوں کی تعمیر کر رہا ہے ۔  معاشی ماہرین کی پیش گوئی کے مطابق آئندہ آنے والی چند دہائیوں میں دیکھتے ہی دیکھتے چین پوری دُنیا کی معاشی سپر طاقت بن کر عالمی تجارتی منڈیوں پر چھا جائے گا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 14 مئی 2017

اقتدار کا کھیل ہمیشہ سے موت کا کھیل بھی رہاہے۔ یہ روایت ازل سے جاری ہے اوراس کھیل پر کبھی کھلاڑیوں نے بھی کوئی اعتراض نہیں کیا۔ اورکھلاڑی بھلا کسی کھیل پر کیوں کر اعتراض کرسکتے ہیں کہ انہیں تو کھیل ہمیشہ لطف دیتا ہے۔ خواہ وہ اقتدار کا کھیل ہو یا موت کا۔ وطن عزیز میں یہ دونوں کھیل ہمیشہ سے کھیلے جارہے ہیں۔ کھلاڑی البتہ تبدیل ہوتے رہتے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 07 مئی 2017

چھ لاکھ انسانی قربانیوں کی بنیاد پر استوار ہونے والا وطن عزیز ملک پاکستان عرصہ ہوا کیا اپنے کیا پرائے سبھی کی آنکھوں میں کانٹے کی طرح کھٹک رہا ہے ۔ کوئی اس کا جانی دُشمن ہے تو کوئی مالی ، کوئی اس کے زندہ دل غیور عوام کی نسل کشی کرنا چاہتا ہے تو کوئی دُنیا کے نقشے سے اس کا وجود مٹانے پر تُلا ہوا ہے۔ لیکن جانے کس کی نیم شب کی دعاؤں کی بدولت یہ ملک آج تک اپنی پوری آب و تاب اور شان و شوکت کے ساتھ قائم دائم ہے اور تاقیامت انشاء اللہ اسی طرح قائم دائم اور پھلتا پھولتا رہے گا ۔

مزید پڑھیں

Conflicts in Conflict

The conflict of Jammu and Kashmir (J&K) is one of the long standing issues of the world. The unfortunate but this unique multi-ethnic, multilingual and multi-religious po

Read more

loading...