مباحث (35)

  وقت اشاعت: 19 2017

یورپ کے بیشتر ممالک میں اسلامو فوبیا  اور دہشتگردی کی آڑ میں نت نئے قوانین و ضوابط  لاگو کرکے شہریوں کو یہ احساس دلانے کی کوششیں کی جارہی ہے کہ وہ محفوظ ہیں۔ اور انہیں ہر طرح کا تحفظ مہیا کرنے میں کسی قسم کی کوئی کمی نہیں رہنے دی جائے گی ۔ انہی کوششوں کے تحت یورپی یونین کے  بڑے اور اہم ترین ملک فرانس نے  جو اقدامات لیے ہیں وہ بظاہر تو دہشتگردی  و انتہا پسندی کے خاتمے کے لیے ہیں لیکن مبصرین کے نزدیک یہ نئے قوانین شہری آزادیوں پر قدغن لگانے یا انہیں محدود کرنے کے مترادف ہیں اور ان سے  غیر جمہوری آمرانہ قوّت کے استعمال کی بو بھی آتی ہے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 18 2017

آسٹریا میں کرائے گئے پارلیمانی انتخابات کے نتیجے میں ملک کی دائیں بازو کی دو انتہا پسند جماعتوں کی زبردست کامیابی نے جہاں ملک میں  غیر ملکیوں اور بالخصوص مسلمانوں کے خلاف تعصب و نفرت کو مزید بڑھا دیا ہے وہاں یورپ بھر میں اعتدال پسند سیاسی و عوامی حلقوں میں بھی ہلچل مچا دی ہے۔ یورپ کے دوسرے ملکوں میں بھی قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں کہ  اُن کے ہاں بھی اسی طرح کی انتہا پسندی عود نہ کرجائے ۔ 

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 10 مارچ 2017

سماجی ماہرین کا کہنا ہے کہ ڈنمارک میں غیر ملکیوں اور مسلمانوں کے متعلق ہونے والے مباحثوں میں سیاست دانوں کا  تند و ترش  اور  قیاس آرائیوں پر منبی بیانات  کے نتیجے میں مسلمان اپنے آپ کو  باقی سماج سے الگ تھلگ رکھنے پر مجبور ہو سکتے ہیں ۔ حالیہ چند مہینوں سے  ڈنمارک میں عوامی  و سرکاری مباحث کے دوران مسلمانوں اور  اسلام پر  بیان بازی کی جارہی ہے۔ ماہرین نے اس پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس کے بہت زیادہ منفی اثرات سامنے آ رہے ہیں اور مسلمان یہ سوچنے لگے ہیں کہ ڈینش سماج میں اُن سے ایسا سلوک کیوں کیا جا رہا ہے اور انہیں سماج کا ایک حصہ کیوں نہیں سمجھا جاتا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 11 جنوری 2017

سال رواں کے دوران ہالینڈ، فرانس اور جرمنی میں پارلیمانی انتخابات ہونے والے ہیں۔ امکان ہے کہ اٹلی میں بھی انتخابات ہوں گے ۔  ماہرین ابھی سے کہہ رہے ہیں کہ ان انتخابات میں جو کوئی بھی  اقتدار سنبھالتا ہے ایک بات یقینی ہے کہ  یورپ کا  سیاسی جغرافیہ بدل جائے گا۔ ان انتخابات کے یورپ کے مستقبل پر گہرے اثرات مرتب ہوں گے۔ اس کے لیے یورپ میں پھیلتی ہوئی قومیت پرستی اور یورپی یونین کے متحدہ ڈھانچے کی مخالف تحریکیں  بھر پور کردار ادا کریں گی ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 09 جنوری 2017

ہالینڈ میں ملک کی مقبول انتہائی دائیں بازو کی فریڈم پارٹی ملک بھر میں مساجد اور قرآن پر پابندی لگا دینا چاہتی ہے ۔ پارٹی کے رہنما  گیرٹ وائلڈرز کا کہنا ہےکہ   اسلام کے خلاف لڑا جانا چاہیے ۔ ہالینڈ میں اس سال مارچ میں پارلیمانی  انتخابات ہوں گے۔ فریڈم پارٹی کے رہنما نے اعلان کیا ہے کہ  کامیابی کی صورت میں وہ ملک بھر میں تمام اسلامی علامات کو ختم کریں گے اور مساجد و قرآن پر پانبدی لگا دیں گے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 03 جنوری 2017

یورپی یونین کی اعلیٰ قیادت کوشش کر رہی ہے کہ اگر شام کی حکومت  باغی گروہوں شریک اقتدار کرلے۔ اِس کے بدلے میں یورپی یونین صدربشار الاسد کی حکومت کو مالی امداد دینے پر تیار ہوگی۔  یورپی یونین کے امور خارجہ کی کمشنر فیڈیریکا موغرینی نے اس سلسلے میں گزشتہ دنوں  ایران، سعودی عرب، ترکی، لبنان، مصر، اُردن، قطر اور جنگ ذدہ شام کے دورے کئے ہیں ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 17 2016

یورپی ممالک میں مسلمانوں کی اصل تعداد کتنی ہے۔ اس بارے میں کئی تخمینے لگائے جاتے ہیں اور کئی ملکوں میں مسلمانوں کی تعداد کو بڑھا چڑھا کر پیش کرتے ہوئے انہیں مقامی آبادی کے لیے ایک ’’ ممکنہ خطرہ‘‘ سمجھا جاتا ہے۔ جب کہ صورتِ حال اِس کے بالکل برعکس ہے ۔ یورپی ملکوں میں مسلمانوں کی اصل تعداد  اُس سے کہیں کم ہے جو تعداد سیاستدان اور  مسلمان مخالف شدت پسند تحریکیں اور گروپس بتاتے ہیں ۔ ڈنمارک میں بھی یہی صورتِ حال ہے ۔ یہ بات چالیس  یورپی ملکوں میں مسلمانوں کی تعداد کے حوالے سے کیے گئے’’برطانوی رائے ریسرچ انسٹی ٹیوٹ،  اپسوس موری ‘‘ کے  ایک جامع سروے میں بتائی گئی ہے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 12 2016

امریکی صدارتی انتخاب  میں ڈونلڈ ٹرمپ کی کامیابی کو جمہوریت کی کامیابی قرار دیا جا رہا ہے۔ لیکن جمہوریت کی اس کامیابی  پر امریکہ میں اور دنیا کے دیگر ممالک میں تحفظات کا اظہار بھی سامنے آئے ہیں۔   ڈونلڈ ٹرمپ کی کامیابی نے نہ صرف امریکہ کو دو دھڑوں میں تقسیم کر دیا  ہےبلکہ اس تقسیم کا اثر یورپ پر بھی پڑا ہے۔ یورپ میں ڈونلڈ ٹرمپ کے انتہا پسندانہ نظریات اور  مسلمانوں کے خلاف اقدامات  کی حمایت کرنے والے یورپی رہنما بڑی گرمجوشی سے انہیں مبارکباد کے پیغامات بھیج رہے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 03 2016

ڈنمارک میں پاکستانیوں کے ایک دیرینہ مطالبے کو پورا کرنے کے لیے پاکستان کی حکومت نے انہیں دوہری شہریت رکھنے کی اجازت دینے کے لیے ٹھوس اقدام لیے ہیں۔ آثار بتاتے ہیں کہ اب وہ وقت دور نہیں جب ڈینش شہریت رکھنے والے کم و بیش پچیس ہزار پاکستانی ڈینش شہریت کے ساتھ ساتھ اپنے آبائی وطن پاکستان کی شہریت بھی رکھ سکیں گے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 15 2016

سویڈ ن کے وزیر اعظم  سٹیفان لؤفوین نے گزشتہ روز قومی ٹیلیویژن پر ایک مباحثے میں حصہ لیتے ہوئے واشگاف الفاظ میں کہا کہ ’’ انتہائی دائیں بازو کی غیر ملکیوں اور خاص کر مسلمانوں کے خلاف متحرک ’’ سویڈن ڈیموکریٹس‘‘ پارٹی ایک ’’ نازی اور نسل پرست ‘‘ پارٹی ہے ۔‘‘

مزید پڑھیں

Praise and prayers for the great people of Turkey

One year ago, this day, the people of Turkey set an example by defending their elected government and President Recep Tayyip Erdogan against military rebels.

Read more

loading...