مباحث (26)

  وقت اشاعت: 06 2017

14 نومبر کو آزاد کشمیر حکومت کو نوٹس دیا گیا تھا کہ ہماری قانونی و سیاسی کو ششوں کے نتیجے میں قائم ہونے والے آزاد کشمیر ٹیکسٹ بک بورڈ کے قیام کو پانچ سال گزرنے کے باوجود اسے نافذ نہیں کیا گیا اور پرانی فرسودہ کتابوں پر آزاد کشمیر ٹیکسٹ بک بورڈ کا لیبل لگا کر تعلیمی اداروں میں پڑھائی جا رہی ہیں۔ یہ کشمیری والدین اور ان کے بچوں کے ساتھ دھوکہ ہے۔ کیونکہ ان میں جموں کشمیر کی تاریخ و ثقافت بارے کچھ بھی نہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 01 2017

ریسرچ سنٹر اینڈ سیکورٹی سٹڈیز ایک پاکستانی ماہر امتیاز گل نے 2007  میں اسلام آباد میں ایک جرمن ادارہ ہنری بوئل ستفتنگ کے تعاون سے قائم کیا تھا جس کا مقصد سیکورٹی اور گورننس تھا۔ تب سے یہ ادارہ وقتا فوقتا مختلف ماہرین کی آراء لینے کے لئے  پروگرامات منعقد کرواتا رہتا ہے ۔ حال ہی میں مسئلہ کشمیر اور اس کے حل پر بحث کے لیے ایک ورکشاپ منعقد کی گئی جس کے دو چیف سپیکر ڈاکٹر سید نذیر گیلانی اور آزاد کشمیر کے ریٹائرڈ جسٹس جناب منظور حسین گیلانی تھے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 28 2017

کسی معاشرے کی اخلاقی قدریں دیکھنے کے لیے اتنا ہی کافی ہے کہ اس کے آسودہ حال لوگ اپنے معاشرے کے کم خوش نصیب، کمزور، بیمار،  نادار، غریب،  یتیم،  بزرگوں اور بچوں کے ساتھ کیا برتاؤ کرتے ہیں۔ ایک مہذب معاشرہ ایسے افراد کے لیے سہارا بنتا ہے جبکہ غیر مہذب معاشرہ ایسے افراد کی مدد کے بجائے ان کا استحصال کرتا ہے۔ ہم سب اگر اپنے انفرادی و اجتماعی رویوں پر غور کریں تو ہمیں باآسانی معلوم ہو جائے گا کہ  ہم کتنے مہذب ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 20 2017

ضلع میرپور کو متحدہ جموں کشمیر میں بھی ایک منفرد مقام حاصل تھا۔ مہاراجہ کے دور میں موجودہ پورا میرپور ڈویژن ایک ضلع تھا۔ جموں کشمیر کی جبری تقسیم کے پندرہ سال بعد ایوبی دورہ حکومت میں ڈیم کی تعمیر کے لیے لوگوں کو یہاں سے زبردستی بے دخل کرنے کی کوشش کی گئی تو اس وقت میرے ماموں راجہ سید اﷲ خان وہاں پولیس انسپکٹر تھے، جنہوں نے آنکھیں بند کرکے حکومت کے حکم پر عمل کرنے کے بجائے لوگوں کے حقوق کے حوالے سے ان سے گفت و شنید کا مشورہ دیا۔  پھر حکومت نے راجہ سیدا ﷲ خان کو ہی ڈیم کے اشو پر ہمارے ایک اور رشتہ دار جنرل سروپ خان کے والد میجر غلام عباس کو قائل کرنے کی ذمہ داری سونپی۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 05 2017

سائنس اور سیاست پندرہ سال تک برطانوی پارلیمنٹ کا رکن رہنے والے ڈاکٹر برائن ایڈن کی آٹو بائیو گرافی ہے۔ ڈاکٹر برائن ایڈن کے ساتھ میرا رابطہ اس وقت ہوا جب برطانیہ میں میری ماورائے عدالت سزا کے خلاف سیاسی و قانونی مہم شروع ہوئی۔ یہ سن نوے کی دہائی کے وسط کی بات ہے جب برطانوی وزیر داخلہ نے یہ انوکھا اعلان کیا کہ میری اور میرے ساتھی ریاض ملک کی سزا کا تعین جج نہیں بلکہ وہ بحثیت وزیر داخلہ کرے گا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 18 2017

تقسیم ہند سے قبل جموں کشمیر کی عوامی تحریک اور جنوبی افریقہ میں سیاہ فام عوام کی تحریک میں کافی مماثلت پائی جاتی تھی۔ جموں کشمیر کے عوام کی اکثریت مسلمانوں کی تھی لیکن حکمران خاندان غیر مسلم تھا جس نے بیس فی صد غیر مسلموں کواسی فی صد مسلمانوں پر مسلط کر رکھا تھا۔ لہذا مہاراجہ کی شخصی حکومت کے خلاف مسلمان اکثریت کی اپنے بنیادی انسانی و جمہوری حقوق کے لیے جد و جہد سو فی صد جائز تھی۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 06 2017

ایک مقبول حدیث کے مطابق مزدور کا پسینہ خشک ہونے سے پہلے اس کی مزدوری ادا کر دینی چائیے۔ نبی کریم نے کسی شخص سے مفت کام کروانے کے عمل کو سخت ناپسند فرمایا اور غلاموں کی آزادی کو صرف پسند نہیں کیا بلکہ ان کی کوششوں سے کئی غلام آزاد ہوئے۔ سب سے بڑی مثال مشہور صحابی حضرت بلال حبشی کی ہے جنہیں حضرت ابو بکر صدیق نے پیسے دے کر آزاد کروایا ۔ حضرت عثمان غنی نے بھی نبی کریم کی ہدایت پر متعدد غلاموں کو آزاد کروایا۔ لیکن سعودی حکمرانوں نے آج بھی اپنے ملک کے اندر غریب ممالک سے آنے والے مزدوروں کو غلام بنا کر رکھا ہوا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 30 ستمبر 2017

غذر اور یاسین کے خوبصورت اور تاریخی علاقوں سے تیسرے دن رکن اسمبلی محمد نواز خان ناجی مجھے واپس گلگت لائے جہاں میں نے ان سے درخواست کی کہ وہ مجھے اکیلا چھوڑ دیں تاکہ میں گلگت سٹی کے عام لوگوں کے ساتھ کچھ وقت گزار سکوں۔ اور دیکھوں کہ وہاں لوگوں کا طرز زندگی اور ماحول کیسا ہے۔ بازار کافی صاف ستھرے اور کاروباری لوگ لین دین کے سلسلے میں زیادہ بحث نہیں کرتے تھے۔ ہوٹل بھی آزاد کشمیر کے نسبت بہتر ہیں۔ مہمانوں کے ساتھ بیروں کی گفتگو سے لگتا ہے کہ اس خطے میں آنے والے سیاحوں کی وجہ سے انہیں کام اور گفتگو کی تربیت دی جاتی ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 23 ستمبر 2017

18 ستمبر 2017 کو بعد دوپہر فاتح گلگت کرنل مرزا حسن جرال ، کپتان جابر خان،  شاہ خان اور صوبیدار صفی اﷲ کی قبروں پر حاضری کے بعد رکن اسمبلی نواز خان ناجی نے مجھے وہ جگہ دکھائی جہاں سے مہاراجہ کے آخری گورنر گھنسارا سنگھ کو گرفتار کیا گیا تھا۔ یہ تمام قبریں اسمبلی سیکرٹریٹ کے احاطے میں ہیں جس کے ارد گرد اب سرکاری تعمیر جاری ہے۔ گورنرگھنسارا سنگھ کی رہائش اب موجودہ چیف سیکرٹری کی رہائش گاہ ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 21 ستمبر 2017

یوں تو انسان کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ ساری دنیا کی سیر کرلے لیکن چند مقامات دیکھنے کا مجھے جنون کی حد تک شوق تھا۔ وہ تھے مکہ، مدینہ، وادی کشمیر اور گلگت بلتستان۔ بھارتی مقبوضہ کشمیرکی وادی کا تو ابھی کوئی چانس نظر نہیں آ رہا لیکن مکہ ومدینہ اور گلگت کا جب بھی میں نے ارادہ کیا تو اچانک غیر متوقع حالات و واقعات آڑے آ جاتے۔ لیکن جب اﷲ تعالی کو منظور ہوا تو مکہ ومدینہ کی حاضری کا انتظام بھی راتوں رات ہوگیا۔

مزید پڑھیں

Growing dangers of Islamist radicalism on Pakistani politics

Mr Arshad Butt is an insightful observer of the political events in Pakistan. Even though the hallmark of Pakistani political developments and shabby deals defy any commo

Read more

loading...