مباحث (198)

  وقت اشاعت: 1 دن پہلے 

ہم نے جب سے سیاسی شعور کی آنکھ کھولی ہے تو پاکستان کے سیاسی، فوجی اور دانشور حلقوں کو یہ کہتے ہوئے سنا ہے کہ امریکہ کی دوستی گھاٹے کا سودا رہا ہے لیکن بد قسمتی سے ہمارے ان تمام سیانوں کی خواہش رہی ہے کہ ان کے امریکہ، یورپ اور اس کے اتحادی عرب ممالک کے ساتھ گہرے  تعلقات قائم ہونے چاہئیں۔ یہی وجہ ہے ان طبقات کی بیشتر اولادیں ان ممالک میں تعلیم حاصل کرتی ہیں اور کاروبار بھی وہاں کر رہی ہیں۔  وہاں پر ان کی کروڑوں کی جائیدادیں ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

2017عالمی سطح پر انتہائی ہنگامہ خیز رہا۔ سال کا آغاز امریکی صدر ٹرمپ کی حلف برداری کی تقریب سے ہوا۔ ٹرمپ کی محنت کش دشمن اور خواتین کی طرف ہتک آمیز رویہ کے خلاف امریکہ میں لاکھوں افراد نے مظاہرے کیے، اس طرح امریکی سماج کے تضادات واضح ہو گئے۔ ایک طرف شمالی کوریا امریکی طاقت کو للکارتا رہا تو دوسری طرف امریکہ کو مشرق وسطیٰ میں شکست و ہزیمت کا سامنا رہا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 24 2017

صاف ستھری فضا تمام نباتات حیاتیات اور انسانی سر گرمیوں کیلئے ضروری ہے۔ لیکن سرمایہ داری کی دیو ہیکل سر گرمیوں اور ماحول دشمن منافع کی اندھی ہوس نے آج دنیا کے  تمام ممالک کی فضا کو برباد کررہی ہے۔ اس نے فضا کو زہر قاتل بنا دیا ہے، پہاڑوں پر جنگلوں کو صاف کر دیا گیا ہے، شہروں کے رہائشی علاقوں میں قائم فیکٹریاں، زہریلا دھؤاں اگلتی رہتی ہیں اور ان سے خارج ہونے والا آلودہ کمیکل زدہ پانی صاف پانی کی نہروں اور دریاؤں میں ڈال دیا جاتا ہے۔ ان زہریلی گیسوں کو ہر جاندار اپنے پھیپھڑوں میں کھینچنے اور گندے پانی کو پینے پر مجبور ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 22 2017

امریکی ڈالر کی قیمت8دسمبر کو انتہائی اونچی سطح پر جا پہنچی جس سے فارن ایکسچینج کی مارکیٹ میں بحران پیدا ہو گیا۔ منڈی کے ذرائع کے مطابق سکوک اور یورو بانڈ کی مد میں 2.5ارب ڈالر کی آمد کے باوجود پاکستان میں امریکی ڈالر انٹر مارکیٹ میں 111روپے سے اوپر چلا گیا اور بعض ماہرین اس خدشے کا اظہار کر رہے ہیں کہ ڈالر 120روپے تک پہنچ سکتا ہے۔ کچھ دن ڈالر کی قیمت106سے108روپے تک رہی مگر اب یہ دوبارہ 112روپے کی بلند ترین سطح پر پہنچ گیا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 20 2017

ہم پاکستان کی نظریاتی سیاست کا تجزیہ کریں تو معلوم ہوگا یہاں پر دائیں بازو کی جماعتیں اور پریشر گروپس مضبوط ہوئے ہیں جبکہ ترقی پسند اور روشن خیال جماعتیں اور اس مکتبہ فکر سے تعلق رکھنے والے کمزور ہوئے ہیں۔ بائیں بازو سے تعلق رکھنے والے افراد جنہیں سوشلسٹ کہا جاتا ہے اگر وہ معاشی مساوات کے حامی ہوں جبکہ جو لوگ آزادانہ خیالات اور روش خیالات کا اظہا ر کرتے ہیں انہیں سیکو لر کہا جاتا ہے۔ سیکولر ازم سے مراد رواداری اور دوسروں کے نظریات کو سننا اور برداشت کرنا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 18 2017

کالم کا عنوان پڑھ کر آپ یقیناً چونک گئے ہوں گے۔ لیکن  سیلاب زد گان اور زلزلہ زد گان ہو سکتا ہے تو موٹر سائیکل زد گان کیوں نہیں ہو سکتے۔ ماضی قریب میں دو پہیوں والی سواری بائی سائیکل کی اہمیت تھی۔ بچے، بوڑھے، نوجوان اور طالب علم اپنے کام کاج، دفاتر، فیکٹریوں، سکولوں اور کالجوں میں جانے کیلئے اس کو استعمال کرتے تھے۔ ملک میں تقریبا چالیس لاکھ سے زائد بائیسکل زیر استعمال تھے۔ اس کے ساتھ سائیکل مستریوں کا بھی روز گار چل رہا تھا۔ کہاں آج کل بائی سایکل سڑکوں گلیوں اور چوکوں میں خال ہی خال دکھائی دیتے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 15 2017

 خریدو فروخت کیلئے ادائیگی کا نظام تاریخ انسانی جتنا پرانا ہے۔ زمانہ قدیم میں کرنسی کی عدم موجودگی میں اشیاء کے بدلے اشیاء کا تبادلہ کیا جاتا تھا جو کہ بارٹر سسٹم کہلاتا تھا۔ اس نظام میں وزنی اشیاء کو تبادلہ کیلئے لے جانا خاصا مشکل کام تھا تو سوچا گیا خریدو فروخت کیلئے کسی دھات کا سہارا لیا جائے جس کا وزن بھی کم ہو۔ چنانچہ سونا اور چاندی کو اپنایا گیا جبکہ سستی چیزوں کی خریداری اور فروخت کیلئے سستی دھاتوں کے چھوٹے سکوں کو استعمال کیا جاتا تھا۔  جو سونے اور چاندی کے درہم کے متناسب ہوتی تھیں ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 09 2017

پاکستان کے قیام کے فوراً بعد ہی سے ایک متفقہ شناخت کو سوچے سمجھے طریقے سے پر اسراریت کا جامہ پہناکر مشکلات کو دعوت دی گئی۔ تمام کثیر القومیتی اور کثیر الثقافتی کمیونٹیوں، نیز رنگا رنگ ریاستی اکائیوں کے مابین یکجہتی پیدا کرنے کا کام سر انجام دینے کی کوششش کی گئی ہے جن سب سے مل کر پاکستان بنا ہے۔ اس دو قومی نظریے کے ذریعے جس نے تقسیم ہند سے قبل علیحدہ خطہ حاصل کرنے میں بنیاد ی کردار ادا کیا تھا، ریاستی آقاؤں میں ہم آہنگی پیدا کرنے کی کوشش بھی کی۔ ہمارے بانی راہنماؤں نے مستقبل کے اثرات و نتایج زیر غور لائے بغیر ہی گو ناں گوں مسائل کا جواب اس سادہ ترین حل میں تلاش کرنے کی کوشش کی ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 08 2017

امریکی صد ر ٹرمپ نے اپنے اتحادی اور حامی عرب ممالک کی تنقید اور مخالفت کے باوجود یورو شلم کو اسرائیل کا دار الحکومت تسلیم کرنے اور وہاں پر مستقل امریکی سفارتخانہ قائم کرنے کا اعلان کیا ہے۔ اس نے اپنی انتخابی مہم کے دوران سفارتحانہ تل ابیب سے یورو شلم منتقل کرنے کا اعلان کیا تھا۔ ٹرمپ کے بقول امریکی کانگریس نے 22سال پہلے 1995میں مکمل اتفاق رائے سے فیصلہ کیا تھا کہ تل ابیب سے دار الحکومت  منتقل کیا جائے گا۔ ہر امریکی صدر چھ ماہ بعد اس عمل کو موخر کرنے کیلئے آرڈر پر دستخط کرتا رہا ہے۔  ٹرمپ سے پہلے صدور اس منصوبہ کو  عملی جامہ پہنانے میں ناکام رہے مگر ٹرمپ نے وعدہ پورا کر دیا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 05 2017

پاکستان کی معیشت کے حوالے سے عالمی بینک کی طرف سے ششماہی رپورٹ پیش کی گئی ہے جس میں سماج کے معاشی کلیدی شعبوں کے حوالے تبصرہ کیا گیا ہے۔ اس رپورٹ کے مطابق مختلف اداروں کی طرف سے حکومت کارکردگی کا جائزہ لیا گیا ہے ، جس میں کچھ باتیں تضادات پر مبنی ہیں۔ اسٹاک مارکیٹ کے ابھار کو سراہا ہے۔ پاکستان کی سٹاک مارکیٹ موجودہ حکومت کے اقتدار سنبھالنے کے بعد مسلسل ترقی کے نئے ریکارڈ قائم کر رہی ہے جبکہ اس کے برعکس ملک میں صنعت کاری کا عمل نہیں ہو رہا ہے اور نہ ہی نئی کمپنیاں قائم ہو رہی ہیں۔ مختلف ممالک کی ریٹنگ کرنے والے ادارے عالمی مالیاتی اداروں کی ہدایت کے مطابق عمل کرتے ہیں جس میں زیادہ تر فیصلے اُن ممالک کی سیاسی اقتصادی اور معاشی مفادات کے حوالے سے ہوتے ہیں۔

مزید پڑھیں

Donald Trump's policy towards Pakistan

Donald Trump's; the president of US war of tweets was a fierce attack on Pakistan, accusing the country of "lies and deceit" and making "fools" of US leaders. Trump decla

Read more

loading...