معزز صارفین ہماری ویب سائٹ اپ ڈیٹ ہو رہی ہے۔ اگر آپ کو ویب سائٹ دیکھنے میں دشواری پیش آرہی ہے تو ہمیں اپنی رائے سے آگاہ کریں شکریہ

مباحث (184)

  وقت اشاعت: 04 اپریل 2018

پاکستان سمیت دنیا بھر میں خواتین ، ننھی بچیوں اور بچوں کے ساتھ  زیادتی  کے بعد قتل کے واقعات میں اضافہ خطرناک حد تک پہنچ چکا ہے۔ لوگ  شکو ہ کرتے نظر آئیں گے کہ ہمارے معاشرے میں موجود چند درندہ صفت نما انسانوں نے خواتین کا جینا حرام کررکھا ہے۔  جنسی تشدد کا نشانہ بننے والی متاثرہ خواتین، بچیاں ، بچے حصول انصاف کیلئے عدالتوں سے انصاف کے منتظر ہیں۔ اس  میں کوئی شک نہیں کہ خواتین ہمارے معاشرے میں باعزت مقام رکھتی ہیں پھر کیوں روزبروز خواتین کے ساتھ زیادتی اور جنسی تشدد کے واقعات میں اصافہ ہورہاہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 31 مارچ 2018

مسلم حکمرانوں کی خاموشی کے سبب دنیا بھر میں آج مسلمان مظالم کا شکار ہیں۔ اقوام متحدہ کا نام نہاد پلیٹ فارم ہمیشہ مغربی مفادات کیلئے استعمال ہوا ہے۔ اسرائیل گٹھ جوڑ ایک بار پھر بے نقاب ہوگیا ہے۔ امریکہ نے ہمیشہ مسلمانوں کی پیٹھ میں چھرا گھونپا ہے اور پوری دنیا میں اس کا ٹارگٹ صرف مسلمان ہیں۔ دنیا میں لگائی گئی آگ کے پیچھے بھی نام نہاد انسانی حقوق کا علمبردار امریکہ ہی ہے۔ اسرائیل عالم انسانیت کیلئے سنگین خطرہ بن چکا ہے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 29 مارچ 2018

اپریل فول دوسروں کے ساتھ عملی مذاق کرنے اور بے وقوف بنانے کا تہوار ہے۔ اس کا خاص دن اپریل کی پہلی تاریخ ہے۔ بتایا جاتاہے کہ یہ یورپ سے شروع ہؤا اور اب ساری دنیا میں مقبول ہے۔ 1508 سے 1539 کے دلندیزی اور فرانسیسی ذرائع  سے  پتہ چلتا ہے کہ مغربی یورپ کے ان علاقوں میں یہ تہوار تھا۔ برطانیہ میں اٹھارویں صدی کے شروع میں اس کا رواج عام ہوا۔ اپریل لاطینی زبان کے لفظ Aprilis یا Aprire سے ماخوذ ہے جس کا مطلب ہے پھولوں کا کھلنا، کونپلیں پھوٹنا، قدیم رومی قوم موسم بہار کی آمد پر شراب کے دیوتا کی پرستش کرتی اور اسے خوش کرنے کے لیے لوگ شراب پی کر اوٹ پٹانگ حرکتیں کرنے کے لیے جھوٹ کا سہارا لیتے۔ یہ جھوٹ رفتہ رفتہ اپریل فول کا ایک اہم حصہ بن گیا۔ انسائیکلو پیڈیا انٹرنیشنل کے مطابق مغربی ممالک میں یکم اپریل کو عملی مذاق کا دن قرار دیا جاتا ہے۔ اس دن ہر طرح کی نازیبا حرکات کی چھوٹ ہوتی ہے اور جھوٹے مذاق کا سہارا لے کر لوگوں کو بیوقوف بنایا جاتا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 20 مارچ 2018

انسانی معاشرہ اللہ تعالیٰ کی باشعور مخلوق کا  اجتما ع ہے۔ کیا کسی مخلوق کے لیے مخلوق کا بنایا ہوا نظام کارگر ہوسکتا ہ۔؟ کبھی نہیں ۔ ہم جس خالق کی تخلیق ہیں، ہمارے لیے امن وسلامتی کے ساتھ جینے کا شیڈول بھی اسی نے دیا ہے۔ آج پوری دنیا میں جنگ کا عالم ہے۔ قدرتی وسائل اور انسانوں کو غلام بننے کے خواہش مند لوگ پوری دنیا کے امن کو برباد کیے ہوئے ہیں۔ اس بات میں کوئی شک نہیں کہ مسلم ممالک میں خون کی ندیا ں بہہ رہی ہیں۔ پاکستان ، افغانستان ،شام ، عراق، فلسطین، برما اور ہندوستان سمیت متعدد ممالک میں  مسلمان بدامنی کے اس ریلے سے محفوظ نہیں۔ اس قیامت خیز قتل و غارت کی تمام تر وجہ انسانی معاشرے میں نافذ نظام ہائے حیات و حکومت کا ناقص ہونا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 18 مارچ 2018

امن کاعالمی انڈکس قوم اور خطے میں امن کے تعلق اندازہ کرنے کی کوشش ہے اور ایک مستند دستاویز ہے۔ جس میں ”اپسلا تنازعات ڈیٹا پروگرام، اکانومسٹ انٹیلی جنس یونٹ، اقوام متحدہ ہائی کمشنر برائے پناہ گزیں ، سٹاک ہوم انٹرنیشنل پیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ، ادارہ برائے اقتصادیات و امن ودیگراداروں کی رپورٹ کے پیش نظر شامل ممالک کو درجہ بند ی دی جاتی ہے۔ 2011سے لے کر اب تک اس میں163ممالک کی امن کے حوالے سے درجہ بندی کی گئی جس کے آخری ممالک میں نو مسلمان ملک  ہیں۔ ان میں شام، عراق، یمن، افغانستان، لیبیا اورپاکستان بھی شامل ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 12 مارچ 2018

صورت حال کی سنگینی کا اندازہ اسی سے لگایا جا سکتا ہے کہ آئند عام انتخابات کیلئے عوامی جلسوں میں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرکزی قائدین ملکی وقوم کی فلاح وبہبود کی بجائے قومی اداروں پر شدید تنقید کرتے نظر آرہے ہیں۔   احسن اقبال حلقہ این اے117نارووال سے 2013میں95481ووٹ ،2008 میں66633ووٹ ، 1997 میں 59677ووٹ ،1993میں 54893ووٹ لےکر کامیاب ہوئے ۔  ایک تقر یب میں ان پر جوتا پھینکنے کا افسوسناک واقعہ پیش آیا۔ چند دنوں بعد خواجہ محمد آصف  جو سیالکوٹ سے قومی اسمبلی کے کئی بار رکن رہے۔ان کے ساتھ کچھ ایسا ہی افسوسناک واقعہ پیش آیا جس میں نوجوان نے ان کے چہرے پر سیاہی پھینک دی ۔ تیسرے واقعہ میں تین بار وزیر اعظم بننے والے نواز شریف کو ایک شخص نے تقریب کے دوران جوتے کا نشانہ بنا ڈالا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 05 فروری 2018

سیاست عربی زبان کا لفظ ہے جس کا مطلب ہے ملکی تدبیر و انتظام۔ یونان میں چھوٹی چھوٹی ریاستیں ہوتی تھیں جنہیں Polis کہا جاتا تھا اور Polis کے معاملات کو Politike کہا جاتا تھا۔ ارسطو نے Politike کے عنوان سے سیاست پر ایک کتاب لکھی جسے انگریزی میں Politics کہا گیا اور یوں Polis کے معاملات چلانے والے Politicion کہلائے۔ اردو میں ریاست کے علم کو سیاست کہا جاتا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 03 فروری 2018

مسلم لیگ (ن) سمیت ہردورکے پاکستانی حکمرانوں کا جلسے جلسوں اور ایوانوں میں یہی شکوہ رہاہے کہ بحرانوں کے ہم ذمہ دار نہیں بلکہ سابق حکمران تھے۔ اپنی نااہلی یا ناقص حکمت عملی کو چھپانے کیلئے ایک دوسرے پر الزام تراشی کرتے رہے ہیں ۔ حقیقت یہ ہے کہ امن و سکون اور بنیادی ضروریات کا حصول عوام کا حق ہے اور ان کی فراہمی حکمرانوں کا فرض اور یہی رفاہِ عامہ کا بنیادی فلسفہ ہے۔ امن و سکون اور احساسِ تحفظ آج کے دور میں ناپید ہوتا چلا جارہا ہے۔ حکمران بہترین طرز حکومت کا دعویٰ تو کرتے ہیں مگر اس کے عملی مظاہر ہمیں کہیں بھی نظر نہیں آتے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ آج کے حکمران ذاتی مفادات کو قومی مفادات پر ترجیح دیتے ہیں۔ قومی اداروں کے ساتھ کھلواڑ کرتے ہیں، قانون و آئین کو اپنی خواہشات کے مطابق ڈھالنے اور اپنی نااہلیت و کرپشن چھپانے کےلئے استعمال کرتے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 24 جنوری 2018

ہر دور میں امہ مسلم کو نئے چیلنجزکا سامنا رہاہے اور آئند بھی رہے گا سوال یہ پیداہوتا ہے کہ آخری کب تک سلسلہ جاری وساری رہے گا۔ ماہرین کی جانب سے پیش گوئی کی جارہی ہے کہ آئندہ چند سالوں یعنی 2030 تک چین دنیا کی سپر طاقت بن جائے گا ۔ امریکہ کے بعد اب چین کا سپرطاقت بننا امہ مسلمہ کیلئے ایک نیا چیلنجزہے ۔ یعنی ’’انگریزی کے بعد چینی زبان کا راج ہوگا ‘‘ کیونکہ اکثریت میں ہردور کے سپرطاقت حکمران کی جو  زبان ہوتی تھی، وہی زبان عوام پر نافذ کی جاتی تھی ۔ جس کی وجہ سے ہزاروں افراد کو غلامی کی زندگی بسرکرنا پڑتی تھی ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 20 جنوری 2018

پاکستان میں 2018کو سینیٹ اور قومی اسمبلی کے عام الیکشن کا سال کہاجارہاہے اور حسب روایت اپوزیشن  ، حکومتی اراکین قومی وصوبائی دونوں ہی عوام کے حقوق کا علم اٹھائے ملک بھر میں جلسے جلوس اور اجتماع کرنے میں مصروف ہیں ۔ سب سے بڑاپاور شومتحد اپوزیشن نے لاہور مال روڈ پر کیا جس کا مقصد سانحہ ماڈل ٹاؤن ، قصورمیں ننھی زینب سمیت متعدد مقتول بچیوں کے لئے انصاف کا مطالبہ تھا ۔ متحد ایوزیشن پاورشو میں عوامی تحریک کے سربراہ علامہ ڈاکٹرطاہرالقادری، پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زردراری ، چیئرمین تحریک انصاف عمران خان ، چیئرمین عوامی مسلم لیگ شیخ رشید ، مسلم لیگ (ق) کے مرکزی رہنما ء چودھری پرویز الٰہی ، سربراہ پاک سرزمین پارٹی مصطفی کمال سمیت اہم  رہنماؤں نے شرکت کی ۔

مزید پڑھیں

Donald Trump's policy towards Pakistan

Donald Trump's; the president of US war of tweets was a fierce attack on Pakistan, accusing the country of "lies and deceit" and making "fools" of US leaders. Trump decla

Read more

loading...