مباحث (169)

  وقت اشاعت: 1 دن پہلے 

اچھے جمہوری معاشروں کی بنیادی خوبی یہ ہوتی ہے کہ وہ سیاسی ، سماجی ، معاشی ، قانونی ، انتظامی اور دیگر اصلاحات کے ساتھ آگے بڑھتے ہیں ۔ کیونکہ جمہوری نظام کی کنجی اصلاحات کا عمل ہی ہوتا ہے ۔ جمہوریت پر مبنی نظام میں فوری انقلاب نہیں آتے بلکہ وہ اصلاحات کو بنیاد بنا کراپنے لیے بہتر اور خوشحالی کا راستہ اختیار کرتے ہیں ۔ اصلاحات کا عمل جتنا زیادہ  مؤثر اور مضبوط  ہوگا،  اتنا ہی اس کی  ساکھ بھی قائم ہوگی ۔ لوگ عمومی طور پر ایسی اصلاحات کے ساتھ کھڑے ہوتے ہیں جن سے ان کے مفادات وابستہ ہوتے ہیں ۔  وہ ان ملکیت کو بھی قبول کرتے ہیں ۔ لیکن ہمارا مسئلہ یہ ہے کہ اصلاحات  پر ہمارا  یقین کمزور ہوتا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 5 دن پہلے 

جب قومی سیاست اور ریاستی نظام اپنے ارد گرد موجود مسائل کا حل تلاش کرنے کی بجائے ایک دوسرے کے خلاف مقابلہ بازی اور محاز آرائی کا راستہ اختیا رکرلیں تو نتیجہ میں ملک  عدم استحکام  کا شکار ہوتا ہے۔ یہ عدم استحکام محض سیاست تک محدود نہیں ہوتا بلکہ اس کے اثرات معیشت اور قومی سلامتی یا سیکورٹی کے معاملات میں بھی دیکھنے کو ملتے ہیں ۔ کیونکہ معاملات کو سیاسی تنہائی میں دیکھنے کی روش بہتر نہیں۔ معاملات کو ایک دوسرے فریقین یا اداروں کے درمیان جاری کشمکش کی صورت میں دیکھنے کی صلاحیت پیدا کرنی چاہیے ۔ پاکستان کا مسئلہ بھی موجودہ صورتحال میں ایک گھمبیر منظر کی نشاندہی کررہا ہے ۔ سیاسی ، انتظامی ، قانونی اور قومی سیکورٹی اداروں کے درمیان جاری بداعتمادی یا مقابلہ بازی کی فضا نے داخلی اور خارجی سیاست کو شدید نقصان پہنچایا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 09 2017

پاکستان کی ریاست اور معاشرہ  ایک فکری انحطاط کا شکار ہیں ۔ یہ ہی وجہ ہے کہ ہماری ریاست کو عوامی مفادات کے تناظر میں جس ذمہ داری کا مظاہرہ کرنا چاہیے تھا ، اس کا فقدان ہے ۔ بنیادی طور پر ریاست اور شہریوں کے درمیان ایک باہمی رشتہ ہوتا ہے ۔ یہ رشتہ ایک دوسرے کے مفادات یعنی حقوق و فرائض کی فراہمی سے جڑا ہوتا ہے ۔  بدقسمتی سے پاکستان میں عمومی طور پر یہ دیکھنے کو مل رہا ہے کہ ریاست، حکومت اور شہریوں کے درمیان بڑھتی ہوئی خلیج نے بہت سے ایسے مسائل پیدا کردیئے ہیں جو ریاست کی اپنی ساکھ پر سوالیہ نشان ہے ۔ ریاست اور شہریوں کے درمیان معاہد ہ اگر  محض کاغذ کی دستاویزات اور عدم عملدرآمد تک ہی محدود ہو تو لوگ ریاست کے ساتھ اپنے باہمی تعلق کو مضبوط نہیں کرسکتے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 08 2017

پاکستان اور خطہ کی سیاست میں استحکام اور دو طرفہ تعلقات کی بہتری میں پاک افغان تعلقات میں بگاڑ دونوں ملکوں کے لیے  بنیادی نوعیت کا مسئلہ بن چکا ہے ۔ یہ بگاڑ چند دنوں میں یا مہینوں میں نہیں بلکہ کئی برسوں سے جاری بداعتمادی پرمبنی سیاست کا نتیجہ ہے۔ ہم بہتری  کی بجائے اپنے عمل سے زیادہ مسائل پیدا کرنے کا سبب بن رہے ہیں  ۔ اگرچہ دونوں اطراف ایسے لوگ اور ادارے موجود ہیں جو  تعلقات میں بہتری کے امکانات کو تقویت دینا چاہتے ہیں۔ لیکن دونوں اطراف اور کچھ دیگر ممالک جو پاک افغان بہتری کو اپنے ایجنڈے کے برعکس سمجھتے ہیں، وہ مسائل پیدا کرنے کی کوشش کررہے ہیں ۔ یہ ہی وجہ ہے کہ اس وقت بہتری پیدا کرنے کے عناصر کمزور اور بگاڑ پیدا کرنے والے زیادہ مضبوط نظر آتے ہیں ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 05 2017

پاکستان اس وقت ایک مشکل صورتحال سے گزررہا ہے ۔ اس صورتحال کو پیدا کرنے میں جہاں خارجی عوامل کارفرما ہیں وہیں ہمارے داخلی مسائل بھی ہماری مشکلات میں رکاوٹ بننے کا سبب بن رہے ہیں ۔ اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ ہم یعنی فیصلہ ساز سیاسی ، انتظامی ، قانونی اور عسکری اداروں کے درمیان مسائل کو سمجھنے میں اتفاق رائے کا فقدان ہے ۔ ایسے لگتا ہے کہ ہم مسئلہ کے حل کی بجائے مسئلہ کے بگاڑ میں اپنا حصہ ڈال کرخود اپنے آپ کو دنیا میں تماشہ بنارہے ہیں ۔ جب قومی مفاد چھوٹا اور ذاتی مفاد بڑا ہوجائے تو پھر بحران سے نمٹنے کے امکانات بھی محدود ہوجاتے ہیں ۔ اصولی طور پر تو ہمیں ایک پیچ پر ہوکر اپنے داخلی اور خارجی معاملات سے نمٹنے میں تمام فریقین کے ساتھ مل کر کام کرنے کی روش کو طاقت فراہم کرنا ہے  مگر جو کچھ اتفاق رائے کے نام پر ہورہا ہے وہ بڑا لمحہ فکریہ ہے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 04 2017

سیاسی جماعتیں، ان کی قیادت اور کارکنان جب سیاسی جماعتوں کو ادارہ جاتی سطح پر مضبوط کرنے کی بجائے فرد واحد یا شخصیت پرستی کی بنیاد پر آگے بڑھتی ہیں تو ان جماعتوں کی داخلی جمہوریت کا سوال بہت پیچھے رہ جاتا ہے ۔ یہ مسئلہ محض کسی ایک سیاسی جماعت کا نہیں بلکہ ہم اس بحران کو تمام جماعتوں میں دیکھتے ہیں جو فرد واحد کے درمیان گھری نظر آتی ہے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 01 2017

کسی بھی معاشرے میں بچے اور بچیاں مستقبل کا اہم سرمایہ ہوتے ہیں ۔ جو ریاست، حکومت، ادارے اور والدین  بچوں اور بچیوں کے ساتھ ان کی بہتر زندگی کے لیے بڑی سرمایہ کاری کرتے ہیں ، وہی معاشرے کامیاب بھی ہوتے ہیں ۔ یہاں سرمایہ کاری سے مراد محض مالی سرمایہ کاری نہیں بلکہ ان کی تعلیم و تربیت سمیت بہت سے ایسے امور ہوتے ہیں جہاں مختلف فریقین ایک ذمہ دار فرد یا ادارے کے طور پر اپنا کردار ادا کرتے ہیں ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 29 ستمبر 2017

سابق وزیر اعظم نواز شریف کے پاس اب دو ہی راستے بچے ہیں ۔ اول وہ خاموشی سے سیاست سے الگ تھلگ ہوکر کنارہ کشی اختیار کرلیں ۔ دوئم وہ خاموشی اختیار کرنے کی بجائے ایک بھر پور سیاسی کردار ادا کریں۔ اس جدوجہد میں ان کو جس حد تک بھی مشکلات کا سامنا کرنا پڑے اس سے گریز نہ کیا جائے ۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ نواز شریف کو ان کے حامی اور مخالفین، دونوں طرز کے مشورے دیں گے کہ وہ کونسا راستہ اختیار کریں۔ حتمی فیصلہ یقینی طور پر نواز شریف کا اپنا ہوگا۔ اس میں ان کے قریبی رفقا  کے مشوروں کا بھی عمل دخل ہوگا ۔ نواز شریف عملی طور پر اب تک کے سیاسی کیریئر میں پہلی بار ایک مشکل صورتحال سے دوچار ہیں اور اس سے باہر نکلنے کی مختلف حکمت عملیاں بھی ان کے ذہن میں موجود ہیں۔ مگر اس سارے عمل میں ان کو اپنی جماعت اور کچھ وفادار ساتھیوں کی جانب سے بھی کچھ مسائل کا سامنا ہے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 25 ستمبر 2017

جمہوریت کی  ایک خوبی شفافیت  ہے  ۔شفافیت پر  مبنی نظام  اداروں کی سیاسی ، قانونی ، انتظامی اور اخلاقی ساکھ کو بھی مضبوط بنانے کا سبب بنتا ہے۔ کیونکہ اگر نظام  یا  ریاستی ادارے  شفافیت پر مبنی نہ ہوں تو پھر نظام نہ تو اپنے اندر افادیت رکھتا ہے اور نہ ہی وہ لوگوں میں اپنی قبولیت کے تقاضوں کو پورا کرسکتا ہے۔ کیونکہ جمہوریت میں انتخابات کا تسلسل اورباقاعدگی سے ہونا اہم ہے ۔ انتخابات کا عمل بنیادی طور پر لوگ کو رائے دہی کا حق دیتا ہے کہ وہ بلا خوف و ججھک اپنی قیادت کا انتخاب کریں ۔ لیکن پاکستان میں شفافیت کے برعکس سیاسی ، انتخابی اور جمہوری نظام  قائم ہے ۔ اس لیے لوگ یہاں شفافیت پر مبنی حکمرانی کے نظام کے ثمرات سے مستفید نہیں ہوسکے ۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 23 ستمبر 2017

جو معاشرہ  انصاف کے تقاضوں کو پورا کرنے کی بجائے لاقانونیت کا شکار ہوجائے تو وہاں محض انصاف کا ہی قتل نہیں ہوتا بلکہ  تشدد کا نظام تقویت پکڑتا ہے ۔ پاکستان ان ملکوں میں شامل ہے جہاں قانون کی حکمرانی کی بجائے افراد یا طاقت ور گروہوں کی حکمرانی کا نظام غالب ہے ۔ یہ ہی وجہ ہے کہ یہاں اداروں کی حکمرانی کا تصور بہت  کمزور ہے اور یہ عمل عام آدمی کو زیادہ بے بسی اور لاچارگی کا شکار کرتا ہے ۔  ریاست، حکومت اور عوام کے درمیان بڑھتی ہوئی خلیج  کی بھی ایک بڑی وجہ عدم انصاف پر مبنی نظام ہوتا ہے ۔

مزید پڑھیں

Praise and prayers for the great people of Turkey

One year ago, this day, the people of Turkey set an example by defending their elected government and President Recep Tayyip Erdogan against military rebels.

Read more

loading...