فوری تبصرہ


  وقت اشاعت: 1 دن پہلے 

پاکستانی سینیٹ نے حال ہی میں موسمی تبدیلی کا قانون منظور کیا ہے ۔ اس طرح پاکستان ان چند ملکوں میں شامل ہو گیا ہے جنہوں نے موسمی تبدیلیوں کے اثرات کی روک تھام اور درجہ حرارت کو کم رکھنے کی عالمی جد و جہد کا حصہ بننے کے لئے قانون سازی کی ہے۔ ملک میں ایک وزارت ماحولیاتی تبدیلیوں کے امور دیکھ رہی ہے اور اب وزیراعظم کی نگرانی میں موسمی تبدیلی کونسل قائم کی جائے گی جس میں چاروں صوبوں کے وزرائے اعلیٰ اراکین کے طور پر شامل ہوں گے۔ تاہم موسمی تبدیلیوں کے حوالے سے کام کرنے والے ماہرین کا خیال ہے کہ پاکستان صرف قانون سازی کے ذریعے موسمی تبدیلیوں سے پیش آنے والی مشکلات کا سامنا کرنے کے قابل نہیں ہو سکتا۔ ملک میں اس شعبہ میں تحقیقی کام نہ ہونے کے برابر ہے ۔ جب تک ملک کے ماہرین موسمی تبدیلیوں کے بارے میں ٹھوس علمی اور تحقیقاتی کام کا حصہ نہیں بنیں گے، اس وقت تک نہ تو حکومت سنجیدہ اقدامات کرسکے گی اور نہ ہی عوام میں اس بارے میں شعور پیدا کیا جا سکے گا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 1 دن پہلے 

پاکستان میں بچوں کو تعلیم کی بجائے اپنا یا اپنے گھر والوں کا پیٹ پالنے کے لئے کام کرنے پر مجبور کرنا ایک سماجی علت کی حیثیت رکھتا ہے۔ اس کی اصلاح کے لئے یکے بعد دیگرے برسر اقتدار آنے والی حکومتیں اپنا فرض بجا لانے اور صورت حال کو تبدیل کرنے میں ناکام رہی ہیں۔ اس موضوع پر ٹھوس سیاسی مؤقف سامنے نہ آنے کی وجہ سے بچوں سے کام کروانے کے جرم کو سماجی قبولیت مل چکی ہے جو بچوں کے عالمی کنونشن اور بنیادی انسانی اصولوں کی خلاف ورزی ہے۔ اس پر طرہ یہ کہ گھروں یا دیگر صنعتوں میں کام کرنے والے بچوں کو آجروں کی طرف سے تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے یا ان کا جنسی استحصال ہوتا ہے لیکن معاشرہ عام طور سے اس پر خاموشی اختیار کرتا ہے۔ اب پنجاب کے وزیر قانون نے کہا ہے کہ بچوں پر تشدد کا کوئی معاملہ سامنے آنے کے بعد اگر کچھ پیسے دے کر معاملہ رفع دفع ہوجاتا ہے تو یہ عین قانون کے مطابق ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

امریکہ میں پاکستان کے نئے سفیر اعزاز چوہدری نے امریکی حکومت اور عوام کو یقین دلایا ہے کہ پاکستان اور چین کے بڑھتے تعلقات اور روس کے ساتھ اس کے خوشگوار مراسم کی وجہ سے امریکہ کے ساتھ اس کے روائیتی تعلقات متاثر نہیں ہوں گے۔ یوم پاکستان کے حوالے سے سفارت خانہ میں منعقد ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ داعش اور دیگر دہشت گرد گروہوں کو ختم کرنے کے لئے دونوں ملک ہی سرگرم ہیں۔ اس کے علاوہ پاکستان امریکہ اور چین کے تعلقات میں پل کی حیثیت بھی رکھتا ہے۔ پاکستانی سفیر کی یہ باتیں پاکستان کی قدیم خارجہ پالیسی کی ترجمان ضرور ہیں لیکن ان سے حقیقی تصویر سامنے نہیں آتی اور نہ ہی دونوں ملکوں کے درمیان تعلقات کا از سر نو جائزہ لینے اور بدلتی صورت حال کے مطابق انہیں ڈھالنے کا اشارہ دیا گیا ہے۔ امریکہ میں ڈونلڈ ٹرمپ کے صدارت سنبھالنے کے بعد سے پاکستان کے حوالے سے کوئی واضح پالیسی اشارہ بھی سامنے نہیں آیا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 4 دن پہلے 

وزیر دفاع خواجہ آصف نے تصدیق کی ہے کہ حکومت پاکستان نے سعودی حکومت کی درخواست پر پاک فوج کے سابق سربراہ جنرل(ر) راحیل شریف کو سعودی عرب کی قیادت میں بننے والے اسلامی ملکوں کے اتحاد کی قیادت کرنے کی اجازت دے دی ہے۔ انہوں نے ایک ٹیلی ویژن انٹرویو میں واضح کیا ہے کہ یہ معاملہ دو حکومتوں کے درمیان طے پایا ہے ، اس لئے جنرل راحیل کو انفرادی حیثیت میں حکومت یا فوج سے اجازت لینے کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ پہلا موقع ہے کہ پاک فوج کے کسی سربراہ کو ریٹائرمنٹ کے چند ماہ بعد ہی ایک غیر ملک میں کسی فوج کی قیادت کرنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔ اگر وزیر دفاع کا یہ بیان درست ہے کہ جنرل راحیل کو نجی حیثیت کی بجائے حکومتی سطح پر طے پانے والے معاہدے کے نتیجے میں اس عہدہ پر روانہ کیا جا رہا ہے تو اس فیصلہ سے پاک فوج کو ایک نیا کردار تفویض کرنے کے عمل کا آغاز ہؤا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 5 دن پہلے 

پاکستان پیپلز پارٹی کی قیادت اپنے دور حکومت میں امریکیوں کو مسلمہ طریقہ کار کے برعکس بڑی تعداد میں ویزے جاری کرنے کے معاملہ پر دفاعی پوزیشن اختیار کررہی ہے اور جوابی وار کے طور پر سوال کیا جا رہا ہے کہ اسامہ بن لادن ایبٹ آباد میں کیا کررہا تھا اور یہ کہ جن امریکی سپیشل فورسز نے اچانک حملہ کرکے 3 مئی 2011 کو القاعدہ کے لیڈر اور دنیا کے سب سے زیادہ مطلوب دہشت گرد کو ہلاک کیا تھا، وہ بھی ویزے لے کر پاکستان کی حدود میں داخل نہیں ہوئی تھیں۔ یہ ایک مضحکہ خیز صورت حال ہے ۔ ایک طرف یہ دعویٰ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ ملک کا وزیر اعظم اپنے کسی سفارت خانے کو ویزے جاری کرنے کا خصوصی اختیار تفویض کرنے کا حق رکھتاہے اور یہ اختیار بعض پابندیوں کے ساتھ دیا گیا تھا۔ اس کے ساتھ ہی نجانے یہ جواب کس سے مانگا جارہا ہے کہ اسامہ بن لادن ایبٹ آباد میں کیا کررہا تھا۔ اصولی طور پراس کا جواب اسی وزیر اعظم کے پاس ہونا چاہئے جو امریکیوں کو ویزے جاری کرنے کا خصوصی اختیار رکھتا تھا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 7 دن پہلے 

پاکستان میں فسادیوں کا قصہ بہت پرانا ہے۔ کبھی ریاست نے جنہیں بڑے پیار اور چاؤ سے پال پوس کر جوان کیا تھا آج وہی وطن عزیز کو خاک و خون میں نہلا رہے ہیں۔ آج 23 مارچ ہے ، یوم تجدید عہد وفا۔ سپریم کورٹ سے لے کر سپہ سالار تک اور وزیراعظم سے لے کر عام حکومتی عہدیدار تک ۔۔۔۔۔۔ سبھی ملک کو دہشت گردی سے پاک کرنے کے بڑے بڑے دعوے کر رہے ہیں۔ دارالحکومت میں سالانہ پریڈ کے موقع پر اپنے خطاب میں صدر مملکت نے ایک بار روایتی بیان دہرایا۔ ان کا کہنا تھا کہ آپریشن ردالفساد سے فتنے کا سرہمیشہ کیلئے کچل دیا جائے گا۔ مگر کیا کیجئے کہ ان خالی خولی باتوں سے کچھ ہونے والا نہیں۔ جب تک ریاست کے پالے ہوئے فتنہ پرستوں کی سرپرستی نہیں چھوڑی جاتی، امن کا خواب ادھورا ہی رہے گا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 21 مارچ 2017

کوئی بھی ریاست جب انتہا پسندوں کی سرپرستی کرتی ہے تو حالات وہی ہوتے ہیں جو پاکستان بھگت رہا ہے۔ اور یہی غلطیاں بھارت گزشتہ کچھ عرصے سے دہرا رہا ہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ انتہا پسند گروہ ہمیشہ کسی بھی ایک طاقت کے تابع نہیں رہے اور آستین کے سانپ کی مانند اپنے ہی بنانے والے کو ڈس لیتے ہیں۔ اس کی کلاسک مثال افغان جہاد ہے۔ اب مودی سرکار یہی غلطیاں دہرا کر ملک میں مذہبی ہم آہنگی کو برباد کرنے پر تلی بیٹھی ہے۔ بابری مسجد کی شہادت اور اس کے بعد حکومتی ردعمل اسی امر کا غماز ہے۔ تاہم خوش آئند امر یہ ہے کہ اب بھارت کی عدالت عظمیٰ نے ایودھیا میں رام مندر اور بابری مسجد تنازعے پر طرفین کو تجویز دی ہے کہ وہ اس کے حل کے لئے بات چیت کے ذریعے تازہ کوششیں کریں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 20 مارچ 2017

پاکستان کا سب سے مقبول کھیل کرکٹ آج شرمندہ ہے۔  وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں ملوث تمام کھلاڑیوں کے نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا حکم دیا ہے۔ کرکٹ کی تاریخ میں غالباً یہ پہلا موقع ہے جب کھلاڑیوں کے بیرون ملک سفر پر پابندی لگا دی گئی ہے۔ کرکٹ کو جینٹل مین گیم کہا جاتا ہے مگر پاکستان کے چند مفاد پرست اور لالچی کھلاڑیوں نے اس کھیل کی روح کو گھائل کر دیا۔ اس تمام تر صورتحال کی ذمہ داری کھلاڑیوں کے ساتھ پاکستان کرکٹ بورڈ پر بھی عائد ہوتی ہے۔ سلمان بٹ، محمد آصف اور محمد عامر کے کیس کے بعد نامناسب اقدامات کا نتیجہ کھل کر سامنے آ رہا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 19 مارچ 2017

پاکستان اور بھارت کے درمیان پانی کا تنازعہ گزشتہ کچھ عرصہ سے زور پکڑ چکا تھا۔ دونوں جانب سے تند و تیز بیانات کی بارش ہو رہی تھی۔ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے تو یہاں تک کہہ دیا کہ خون اور پانی ایک ساتھ نہیں بہہ سکتے۔ مودی کا یہ بیان واضح طور پر سندھ طاس معاہدہ کے تناظر میں پاکستان کا پانی بند کرنے سے متعلق تھا۔ پاکستان کی زراعت کا کافی حد تک انحصار بھارت سے آنے والے دریائی پانی پر ہے۔ اگر بھارت سندھ طاس معاہدہ پر ہٹ دھرمی کا مظاہرہ کرتے ہوئے بدستور ڈیمز بناتا رہا تو وہ وقت آنے والا ہے جب پاکستان پانی کی بوند بوند کو ترس سکتا ہے۔ تاہم اب خوش آئند امر یہ ہے کہ دونوں ممالک ستمبر 2016 سے معطل مذاکرات بحال کرنے جا رہے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 19 مارچ 2017

دہشت گردوں نے بھارت کے شہر آگرہ میں شاہ جہاں کے دور میں تعمیر ہونے والے تاج محل پر حملہ کرنے کی دھمکی دی ہے۔ یہ دھمکی دولت اسلامیہ کے حامی ایک گروہ احوال امتہ نے دی ہے جس نے ایک پیغام میں کہا ہے کہ تاج محل اس کا اگلا ٹارگٹ ہو گا۔ اس اطلاع کے بعد تاج محل پر پولیس کے پہرے میں اضافہ کردیا گیا ہے اور بم ڈسپوزل اسکواڈ کا ایک دستہ بھی اس کے قریب متعین کیا گیا ہے۔ بھارت کے حکام یہ دعویٰ کرتے رہے ہیں کہ وہاں دولت اسلامیہ کا کوئی وجود نہیں ہے لیکن اس دھمکی سے اندازہ ہوتا ہے کہ شام اور عراق میں پروان چڑھنے والا دہشت گرد گروہ صرف مشرق وسطیٰ ، افغانستان یا پاکستان میں ہی اثر و رسوخ کا حامل نہیں ہے بلکہ یہ دنیا بھر میں مسلمان آبادیوں میں اپنے ہمدرد پیدا کرنے میں کامیاب ہو رہا ہے۔ اس دھمکی سے بھارتی حکام پر یہ بھی واضح ہو گا کہ ہر معاملہ میں پاکستان پر الزام تراشی اس وقت دنیا کو درپیش دہشت گردی کا علاج نہیں ہے بلکہ اس کے خاتمہ کے لئے مل جل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

مزید پڑھیں

Threat is from inside

Army Chief General Raheel Sharif assured the nation that country’s borders are secure and the army is aware of threats and intrigues of the enemies. Speaking at an even

Read more

loading...