’میں نے اپنے خوابوں پر بھروسہ کیا‘

  وقت اشاعت: 11 اگست 2017

پاکستانی اداکارہ ماہرہ خان نے بتایا کہ میرا خواب تھا شاہ رخ خان کے ساتھ کام کرنا، میں نے اس خواب کو پورا کرنے کے لیے کچھ نہیں کیا، بس اپنے خوابوں پر بھروسہ کیا۔

پاکستانی اداکارہ ماہرہ خان نے آغا خان یونیورسٹی میں منعقدہ خصوصی لیکچر سیریز میں شرکت کے دوران اپنی زندگی کے تجربات شیئر کیے جو یقیناً لوگوں کو متاثر کرنے میں کافی مددگار ہیں۔

ایک رپورٹ کے مطابق اس موقع پر ماہرہ خان کو مداحوں کے ایک بڑے ہجوم نے گھیرے رکھا، تاہم ماہرہ خان ہر ایک سے کافی خوش مزاجی سے ملیں، سیلفیز لیں اور لوگوں کی جانب سے پوچھے گئے سوالات کے جواب بھی دیے۔

ماہرہ خان کی تقریر کا فوکس خود پر یقین رکھنا، کامیابی حاصل کرنے کا فارمولا، شکست سے نہ ڈرنا اور خواب دیکھنا جیسی متاثر کن باتوں پر رہا۔ اداکارہ نے کہا ’یقین ایک بہت خوبصورت اور اہم چیز ہے اور اس کی اہمیت اُس وقت زیادہ ہوتی ہے جب یہ ختم ہوجائے‘۔ ماہرہ کا مزید کہنا تھا کہ ’جب آپ اپنی زندگی میں کسی مشکل میں مبتلا ہوجاتے ہیں تو یقین آپ کی مدد کرتا ہے‘۔

ماہرہ خان نے اپنے کیریئر کے ابتدا میں سامنے آنے والے مسائل کے حوالے سے بتایا کہ وہ کالج کے دنوں میں کافی جدوجہد کرتی رہیں، انہوں نے دو ملازمتیں کی، لیکن انہیں یقین تھا کہ ایک دن انہیں اس کا پھل ضرور ملے گا۔ کامیاب اور ناکامی کے حوالے سے اداکارہ نے بتایا کہ کامیاب ہونے کے لیے ہم سب کو ناکامی سے گزرنا پڑتا ہے اور وہ عملی اور ذاتی زندگی میں ناکامی دیکھ چکی ہیں۔

اپنی پہلی فلم ’بول‘ کے بارے میں ماہرہ نے بتایا کہ بہت سے لوگوں نے انہیں اس فلم میں کردار کرنے سے منع کیا تھا کیوں کہ یہ کردار کافی چھوٹا تھا، تاہم انہوں نے اپنے دل کی بات سنی، ماہرہ نے اپنے کامیاب ڈرامے ’ہمسفر‘ میں کام بھی ایسے ہی کیا تھا۔ ان دونوں ہی پروجیکٹ کے کامیاب ہونے کے بعد کامیابی ان کے قدم چومنے لگی۔

اپنی پہلی بولی وڈ فلم ’رئیس‘ کے حوالے سے ماہرہ نے مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ’مجھے فلم رئیس میں کوئی خاص کریڈٹ نہیں دیا گیا اور جب فلم ریلیز ہوئی تو مجھ پر ہندوستان میں پابندی لگادی گئی جبکہ میری فلم پر پاکستان میں بھی پابندی عائد کردی گئی‘۔ انہوں نے مزاحیہ انداز میں کہا، ’امید ہے مجھے میری ایرانی فلم میں کریڈٹ دیا جائے، کیوں کہ بیرون ملک کسی فلم میں کام کرنا بڑی بات ہے‘۔

اداکارہ کا مزید کہنا تھا کہ ’ناکامی بہت کچھ سکھاتی ہے اور سیکھنے سے کامیابی ملتی ہے، ہم اداکار جانتے ہیں کہ اپنے چہروں پر مسکراہٹ کیسے پینٹ کریں، میں نے بھی ایسا کیا ہے، اپنے ہر اچھے بُرے وقت میں، میں نے ایسا ہی کیا ہے، میرے گھر والوں نے اور دوستوں نے ہمیشہ میرا ساتھ دیا‘۔

ماہرہ نے اس موقع پر مداحوں کو یہ بتا کر حیران کردیا کہ ان کی دادی چاہتی تھی کہ وہ ڈاکٹر بنیں، کیوں کہ وہ پڑھائی میں کافی اچھی تھیں، تاہم وہ اداکارہ بننے کے خواب دیکھ رہی تھیں۔

انہوں نے بتایا، ’میں مادھوری ڈکشٹ کی طرح ساڑھی پہن کر ڈانس کرنے کے خواب دیکھ رہی تھیں، میرا خواب تھا شاہ رخ خان کے ساتھ کام کرنا، میں نے اس خواب کو پورا کرنے کے لیے کچھ نہیں کیا، بس اپنے خوابوں پر بھروسہ کیا‘۔

آپ کا تبصرہ

Growing dangers of Islamist radicalism on Pakistani politics

Mr Arshad Butt is an insightful observer of the political events in Pakistan. Even though the hallmark of Pakistani political developments and shabby deals defy any commo

Read more

loading...