معزز صارفین ہماری ویب سائٹ اپ ڈیٹ ہو رہی ہے۔ اگر آپ کو ویب سائٹ دیکھنے میں دشواری پیش آرہی ہے تو ہمیں اپنی رائے سے آگاہ کریں شکریہ

والتھم فاریسٹ پاکستانی کمیونٹی فورم کا مشاعرہ

  وقت اشاعت: 03 جنوری 2018

رپورٹ و فوٹو: امجد مرزا 

اردو و پنجابی ادب کی ترقی و ترویج کے لئے لندن واحد شہر ہے جہاں ہر ماہ کہیں نہ کہیں ادبی محفل کا اہتمام ہوتا ہے اور بے شمار ایسی ادبی تنظیمیں ہیں جو مکمل پابندی کے ساتھ زبان و ادب کی آبیاری میں مصروف  ہیں۔ ان میں ’’والتھم فاریسٹ پاکستانی کمیونٹی فورم‘‘ کا نام نمایاں ہے کیونکہ گزشتہ دس برسوں سے یہ تنظیم باقاعدگی کے ساتھ ادبی محافل اور کتابوں کی تقریب رونمائی کررہی ہے ۔ جس کے روح رواں و بانی معروف شاعر و ادیب امجد مرزا امجدؔ  ہیں۔

24دسمبر 2017کو تین بجے 425 لی برج روڈ لیٹن ایسٹ لندن کے ہال میں ایک نہایت خوبصورت ادبی محفل کا انعقاد ہوا جس میں جرمنی کے چار معروف شعرا و ادبا کی شرکت متوقع تھی ۔ چار کتابوں کے مصنف برلن سے سرور غزالی ، برلن ہی سے دو کتابوں کے مصنف معروف شاعر خواجہ حنیف تمنا اور فرینکفرٹ کی معروف ادبی شخصیت کالم نگار ’’جرمن اردو کلچرل سوسائٹی ‘‘ کے بانی وصدر عرفان احمد خان اور فینکفرٹ کے معروف شاعر ’’شریف اکیڈیمی ‘‘ کے بانی و صدر شفیق مراد ۔

اس پروقار تقریب کا آغاز  علامہ محمد اسماعیل  نے اپنی خوبصورت  تلاوت قرآن پاک سے کیا جس کے بعد انہوں نے نعت کے گلہائے عقیدت نچھاور کئے۔  نظامت کے فرائض  امجد مرزا امجدؔ نے  احسن طریقے سے نبھائے۔ ہال سامعین و شعرا و شاعرات سے کھچا کھچ بھرا ہوا تھا ۔ اور تین بجے سے سات بجے تک بڑی دلچسپی اور انہماک کے ساتھ پروگرام سنا گیا ۔ اسٹیج پر صدارت کے لئے ماہر اقبالیات پروفیسر محمد شریف بقا موجود تھے ساتھ ہی تنظیم کے صدر جناب ڈاکٹر شوکت نواز خان  بھی تشریف فرما تھے ۔  جرمنی کے مہمان شعرا سرور غزالی ،عرفان احمد خان اور خواجہ حنیف تمنا، برمنگھم سے تشریف لائے ہوئے معروف شاعر  محمد فاروق نسیم جلوہ افروز تھے ۔ جرمنی کے شفیق مراد چونکہ کسی شادی پر بھی مدعو تھے لہذا وہ وہاں مصروفیت کی بنا پر شریک نہ ہوسکے ۔

پہلے حصے میں جرمنی کے  سرور غزالی  کی چوتھی کتاب ’’میرے مضامین‘‘ کی تقریب رونمائی ہوئی جس پر امجد مرزا نے مضمون پڑھا ۔ یہ کتاب ’ایما زون‘ نے شائع کی اور وہیں سے دستیاب ہے ۔ سرور غزالی نے بتایا کہ انہوں نے کتاب تیار کرکے ایما زون کو بھیجی ہے جو آرڈر پر پولینڈ سے کتاب پرنٹ کرکے مطلوبہ خریدار کو بھیجی جائے گی۔ جس کی قیمت دس ڈالر ہے ۔ اس کے بعد امجد مرزا امجدؔ کی سولہویں کتاب جو اردو کا دوسرا شعری مجموعہ کلام بنام ’’ سوزِ حیات ‘‘ کی تقریب رونمائی کی گئی ۔ معروف ادیب کئی دینی کتب اور سفرناموں کے مصنف  عبدالروؤف قاضی  نے مضمون پڑھا اور کتاب اور مصنف کے بارے میں اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ امجد مرزا نے بتایا کہ آج کل وہ کتابیں لندن سے ہی شائع کروا رہے ہیں جو پاکستان سے نہایت سستی بہتر کوالٹی اور جلد شائع ہوتی ہیں۔ جو وہ اپنے پبلشنگ ادارے ’’سویرا اکیڈیمی‘‘ کے پلیٹ فارم سے جاری کرتے ہیں۔  انہوں نے اس کتاب کی نہایت سستی اور کاسٹ پرائس پر صرف تین پونڈ میں بیچنے کا اعلان کیا جو ایک ریکارڈ ہے۔ ان دونوں کتب کی رسم اجرا کی تقریب اسٹیج پر تشریف فرما مہمانوں ے مل کر کی ۔

اس کے بعد مشاعرے کی ابتدا ہوئی اور امجد مرزا نے سب سے پہلے اپنا پنجابی کلام اور نئے سال کی مبارک باد اور دعائیہ نظم اپنے خاص انداز و ترنم میں سنا کر داد سمیٹی ۔ ان کے بعد اسلم رشید، زاہد اسلم ، پروفیسر شاہد اقبال ، نجمہ شاہین ، شاہین اختر شاہینؔ ، عابدہ شیخ، اقبال ، محمود علی محمودؔ ، سید کامران زبیر کامیؔ ، ڈاکٹر کاشف بھٹی ، فضل کریم، صوفی لیاقت، اشتیاق گھمن، ڈاکٹر رحیم اللہ شادؔ ، عبدالرزاق رانا ، عبد القدیر کوکبؔ ، سیمیں برلاس، شکیب مرزا سرور غزالی ، محمد فاروق نسیم ، خواجہ حنیف تمنا ؔ ، عرفان احمد خان اور صدرِ محفل جناب پروفیسر محمد شریف بقاؔ  نے اپنا کلام پیش کیا ۔ تمام مہمانوں کی چائے اور لوازمات سے ابتدا ہی میں تواضع کی گئی۔

 

آپ کا تبصرہ

Donald Trump's policy towards Pakistan

Donald Trump's; the president of US war of tweets was a fierce attack on Pakistan, accusing the country of "lies and deceit" and making "fools" of US leaders. Trump decla

Read more

loading...