مباحث


  وقت اشاعت: 1 دن پہلے 

نوازشریف نے سندھ کے مسلسل دورے شروع کر دیئے ہیں۔ ان دوروں نے سیاست میں اک ہلچل سی مچا دی ہے۔ مسلم لیگ نون نے سندھ کو نظرانداز کر رکھا تھا۔ یہ ایک سوچی سمجھی پالیسی تھی۔ سوچ یہ تھی کہ سندھ میں پی پی کو نہ چھیڑا جائے۔ اپنی جیت کا تو کوئی فوری خدشہ ہے نہیں۔ سیاسی پوزیشن ہی خیر خیریت والی ہے۔ جب سادہ اکثریت لینا ہی ممکن نہیں تو پھر پی پی کو سندھ میں کھلا میدان دیا جائے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 1 دن پہلے 

پاکستان کی موجودہ حکومت کی معیاد ختم ہونے میں تقریبا ایک سال کا عرصہ باقی رہ گیا ہے اور اگلے سال ملک میں قومی اور صوبائی اسمبلیوں کے انتخابات منعقد ہوں گے۔ سیاسی جماعتوں نے 2018 کے عام انتخابات کے لئے ابتدائی تیاریاں شروع کر دی ہیں  اور الیکشن لڑنے کے خواہشمند امیدواروں کی کوششیں بھی شروع ہو گئی ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 1 دن پہلے 

نئی نسل کو وطنِ عزیز کا مکمل نام "اسلامی جمہوریہ پاکستان" بتاتے ہوئے بہت دکھ ہوتا ہے۔ یہ ویسے ہی ہے  کہ آپ کسی خوبصورت سے عنوان اور سرورق کی وجہ سے کوئی کتاب خرید لائے ہوں اور کتاب کے مطالعہ کے بعد آپ کو عنوان اور سرورق کے برعکس مایوسی کا سامنا کرنا پڑے۔  اور کسی حد تک اپنی اس رائے کو تبدیل کرنا پڑے کہ  کتاب بہت عمدہ ہوگی۔

مزید پڑھیں

loading...

  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

عزیز دوست اسد خالد فوج میں اچھے رینک پر فائز تھے۔ مطالعے کا شوق تھا۔ اپنے جوانوں سے بات چیت کرتے تو علاوہ دیگر امور کے معلومات عامہ پر بھی بات کرتے۔ ان کا خیال تھا کہ ایک اچھے سپاہی کے لئے بندوق کے علاوہ ایک سوچنے سمجھنے والے دماغ کا مالک ہونا بھی ضروری ہے۔ ایک روز انہوں نے ایک جوان سے سے پوچھا کہ پاکستان کس نے بنایا؟ جوان نے کہا کہ علامہ اقبال نے۔ اسد نے سرزنش کے انداز میں کہا کہ میں نے تو سنا ہے کہ پاکستان قائداعظم نے بنایا تھا۔ پوٹھوہار کے سیدھے سادھے جوان نے خالص فوجی روزمرہ میں افسر سے اتفاق کرتے ہوئے کہا ۔ ’جی ہاں سر ۔ اس کی بھی ڈیوٹی لگی تھی‘۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

پچھلے دنوں ہندوستان کا سب سے بڑی ریاست یو پی میں صوبائی الیکشن ہوا تھا ۔ جس پر ہندوستان کے زیادہ تر لوگوں کی نظر لگی ہوئی تھی۔ اس کے علاوہ دنیا بھر کی نظر اس انتخاب پر مرکوز تھی۔ اس کی ایک وجہ یہ ہے کہ یوپی ہندوستان کا سب سے زیادہ آبادی والا صوبہ ہے اور یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ہندوستان کی سیاست پر یوپی کے نتیجے کا کافی اثر و رسوخ ہوتا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

میرے سامنے 25 مارچ کا روزنامہ جنگ میں  سلیم صافی کا کالم ’’طالبان کے خلاف عام معافی کیوں؟‘‘ موجود ہے اور میں اس  مضمون کو  کئی  مرتبہ پڑھ چکا ہوں۔  میں یہاں  صرف  اس مضمون  میں سے ان باتوں کو نقل کروں گا جس  مقصد کےلیے سلیم صافی نے یہ مضمون  لکھاہے۔ موصوف فرماتے ہیں  کہ ’’میرا عقیدہ ہے کہ ریاست کے خلاف بندوق اٹھانے سے بڑھ کر سنگین جرم کوئی نہیں۔ چونکہ میں جانتا ہوں کہ ریاست کے خلاف بندوق اٹھانے والوں اور اپنے جسموں سے بم باندھ کر خود اپنے آپ کو اور معصوم پاکستانیوں کو اڑانے والوں کی ایک بڑی تعداد مخلص لوگوں پر مشتمل ہے اور چونکہ میں جانتا ہوں کہ عسکریت پسندوں کی ایک بڑی تعداد ٹریپ ہوکر ریاست پاکستان کے خلاف اس ناپاک اور ناپسندیدہ جنگ میں مبتلا ہے۔ اس لئے میں زہر کا یہ گھونٹ پی کر اس موقع پر یہ گزارش کررہا ہوں کہ حکومت پاکستان عسکریت پسندوں کے لئے عام معافی کا اعلان کردے‘‘۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

پاکستان کی سیاست کے اپنے ہی ڈھنگ ہیں۔ فوجی حکومت ہو یا سول ، اس میں عوام کی سیاست کی بجائے اقتدار کی سیاست کا ہی راج ہوتا ہے۔ گو سول حکومتیں جمہوریت کے ادوار میں عوام کا ذکر اپنے بیانات اور خطابات میں بڑے زور سے کرتی ہیں لیکن عملاً سول حکومتیں بھی اقتدار میں داخل ہونے اور رہنے کے لیے عوام پر انحصار کم اور ’’طاقت کے مراکز‘‘ کی سرپرستی کی ہی خواہاں رہتی ہیں۔ طاقت کے مراکز مقامی ہوں یا بیرونی۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

امریکہ سپر پاور سہی مگر وہ اس وقت معاشی طور پر 3 کھرب ڈالر کا مقروض ہے۔ اس نے افغانستان پر حملہ کرنے کیلئے تین کھرب پینتالیس ارب ڈالر کا بجٹ منظور کیا تھا اور آج ہی کی ایک خبر میں کہا گیا ہے کہ واشنگٹن کے ایک ریسرچ گروپ کے مطابق افغانستان میں امریکی فوجی کارروائی پر 800 ملین ڈالر سے ایک بلین ڈالر ماہانہ تک خرچ ہو رہا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 3 دن پہلے 

صحافت کو اگر اس کے تمام تر اخلاقی اور صحافتی سنہری ضابطوں اور اصولوں کے ساتھ اپنایا جائے تو اس سے قوموں کی بہترین ذہنی نشو و نما کی جا سکتی ہے۔ اور یہ شعبہ ایک انتہائی فعال کردار ادا کرکے نوجوان نسل کو دورحاضر کے تقاضوں کے مطابق معلومات فراہم کرکے ایک مہذب مقام دلوا سکتا ہے۔ اگر صحافت کے مفہوم کو سمجھا جائے تو اس کا مطلب عوام کو باخبر کرنا ہے لیکن آج کل انہیں گمراہ کیا جا رہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ صحافت کو بہت زیادہ تنقید کا سامنا ہے اس کی بنیادی وجہ اس شعبے کا شتر بے مہار جیسا کردار ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 3 دن پہلے 

کبھی کبھی یوں ہی کچھ لکھ لینا چاہیئے ۔ بلا وجہ اور کسی مقصد کے بغیر اور دل کی بھڑاس نکالنے کے لئے۔ لیکن سوال پھر یہ بھی پیدا ہوتا ہے کہ کیا دل کی بھڑاس کبھی نکل بھی سکتی ہے۔ اور  ہم جب دل کی بھڑاس یا دل کا غبار نکال لیتے ہیں تو کیا واقعی غبار چھٹ جاتا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 3 دن پہلے 

کھیل کسی بھی صحت مند معاشرے کا ایک اہم حصہ ہوتے ہیں، جو معاشرے میں مثبت رجحانات اور صحت مند مقابلے کو پروان چڑھاتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ دنیا بھر کے تمام ممالک کھیلوں کے شعبے میں خصوصی دلچسپی لیتے ہوئے اس کی ترقی کے لیے کوشاں رہتے ہیں۔ ایک وقت تھا کہ دنیا میں پاکستان کے بغیر کھیلوں کا تصور ناممکن تھا اور ہم بیک وقت کرکٹ، ہاکی، سکواش اور سنوکر کے عالمی چیمپئن تھے۔ موجودہ دور میں دہشت گردی اورسیاسی بحران نے جہاں تعلیم وصحت کے اداروں کوتباہ کیا ہے وہیں اس کا براہ راست اثر کھیلوں کے شعبے پر بھی پڑا ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 3 دن پہلے 

چار سال ہونے کو آئے ہیں کہ اسٹیبلشمنٹ نے متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) سے کسی بھی مذاکرات سے انکار کردیا تھا۔  اسٹیبلشمنٹ کا کہنا تھا کہ جب تک وہ اعتماد سازی کے لیے بعض شرائط پوری نہیں کرتے، ان سے بات  چیت نہیں ہوسکتی۔ گزشتہ سال  جولائی تک اسٹیبلشمنٹ ایم کیو ایم سے چاہتی تھی کہ پہلے وہ اس کی شرائط پوری کرے، پھر مذاکرات ہوں گے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 4 دن پہلے 

چند دنوں سے افغان امن کے حوالے سے روس کے شہر ماسکو میں کانفرنس کے بارے خبریں گردش کر رہی ہیں۔ اس حوالے سے چند ماہ قبل بھی کوششیں کی گئیں جن میں افغان امن پر اتفاق کیا گیا۔ اسی ضمن میں اگلے ماہ ماسکو میں روس، چین، افغانستان، پاکستان، بھارت اور دوسرے وسطی ایشیائی ممالک کے وفوداکٹھے ہوں گے۔ امریکہ کا شمولیت سے انکار کئی شکوک و شبہات  پیدا کرے گا۔ 

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 4 دن پہلے 

پاکستان میں ہر سال   23 مارچ کا دن پوری پاکستانی قوم ’’ یوم پاکستان‘‘ کے طور پرشاندار طریقے سے مناتی ہے ۔ 23 مارچ 1940 کو لاہور کے منٹو پارک (موجودہ اقبال پارک جہاں اب مینار پاکستان بھی موجود ہے)  میں آل انڈیا مسلم لیگ کے تین روزہ سالانہ اجلاس کے اختتام پر ایک تاریخی قرارداد منظور کی گئی تھی جس کی بنیاد پر مسلم لیگ نے برصغیر میں مسلمانوں کےلیے ایک علیحدہ وطن کا مطالبہ کیا۔  یہ یاد رہے کہ آج جس وطن ’’پاکستان‘‘   میں ہم رہ رہے ہیں درحقیقت یہ 90 سال  کی جہدوجہد کا نتیجہ ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 4 دن پہلے 

ملک میں اگلے عام انتخابات کے لیے غیر اعلانیہ تیاریاں شروع ہوچکی ہیں۔ بیشتر سیاسی جماعتوں نے اس کے لیے اپنی اپنی حکمت عملی تیار کرلی ہے۔ اگرچہ ابھی اس حکمت عملی کا باقاعدہ اعلان نہیں ہوا لیکن سیاسی جماعتوں کی قیادت کے ذہنوں میں اس حوالے سے ایک واضح نقشہ موجود ہے جس کو سامنے رکھ کر وہ آگے بڑھ رہی ہیں۔ اور وقت آنے پر اس نقشے کی اپنی پارٹیوں کی سینٹرل ایگزیکٹو یا مجالسِ عاملہ جیسی فیصلہ ساز باڈی سے منظوری لے لیں گی۔

مزید پڑھیں

Threat is from inside

Army Chief General Raheel Sharif assured the nation that country’s borders are secure and the army is aware of threats and intrigues of the enemies. Speaking at an even

Read more

loading...