نگر نگر


  وقت اشاعت: آج 16:27:19

دہشت گردی کا خاتمہ آج ہر پاکستانی کے دل کی آواز ہے اور ایک خواب ہے۔ لیکن بدقسمتی سے سالہاسال کی مشقت کے باوجود اس پر قابو نہیں پایا جا سکا۔ یہ درست ہے کہ گزشتہ سالوں کی نسبت اب بہت کمی واقعی ہوئی ہے لیکن اس کا مطلب یہ ہر گز نہیں ہے کہ دہشت گردی ختم ہوگئی ہے یا یہ کہ دہشت گردوں کی کمر ٹوٹ گئی ہے ۔ سانحہ کوئٹہ جس میں بلوچستان کی وکلا برادری کی فرنٹ لائن قیادت مکمل طور پر شہید ہو گئی تھی، کے بعد سے سہون شریف  کے خودکش حملوں تک یہ بات سامنے آئی ہے کہ دھماکوں میں کمی یا وقفہ ان دہشت گرد تنظیموں کی حکمت عملی ہو سکتی ہے۔  حالیہ دھماکوں سے انہوں نے یہ بتایا ہے کہ وہ اپنے سہولت کاروں اور نیٹ ورک کے ساتھ جوں کے توں موجود ہیں اور جب جی چاہا اپنے  ٹارگٹ کو حاصل کرسکتے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 12 فروری 2017

  یہ 28جنوری کی ایک انتہائی سرد صبح تھی اور صبح کے چار بجنے کو تھے جب ہم جرمنی سے بلجیم کے لئے روانہ ہوئے ہماری منزل بر سلز تھی مجھے ایک بار پھر افنان خان کی رفاقت میسر تھی اس سے پہلے ہم دونوںبنکاک کا بھی یاد گار سفر کر چکے تھے خان کا تعلق بڑے انگریزی اخبار سے ہے اور ایک دبنگ انٹر نیشنل صحافی ہیں جس کا قلم انسانی حقوق ، انسانیت اور انسانی اقدار کے لئے ہی وقف ہے باتیں کرتے کرتے سفر کا کچھ پتہ نہ چلا بی ایم ڈبلیو سپورٹس گاڑی نے پانچ گھنٹے کا سفر ساڑھے تین گھنٹے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 07 فروری 2017

کسی فرد کو حفاظتی اقدامات کے طور پر  یا اس کی شرارتوں سے تنگ آکر نظر بند کر دیا جانا بھی اپنی نوعیت کی انوکھی ایجاد ہے۔  بچپن میں دوسرے بچوں سے سنا تھا کہ انہیں سزا کے طور پر گھر سے نکال دیا جاتا ہے لیکن ہمارے اپنے گھر کی  روایت یہ تھی کہ کمرے سے باہر نکلنے پر پابندی لگادی جاتی تھی۔ تب ہماری بہت خواہش  ہوتی کہ کاش ہمیں بھی گھر سے باہر نکالا جاتا تو سزا کے دوران کچھ سیر سپا ٹے سے لطف اندوز ہی ہوتے۔ ایسی کسی سزا کی والدین کی طرف سے نہ نافذ کر نے کا نقصان یہ ہوا کہ صرف اٹھارہ سال کی عمر میں ہم باہر نکل گئے۔ باہر کے ملکوں میں بھی یہی دیکھا کہ بچوں کو سزا ہاؤس اریسٹ کی صورت میں ہی دی جاتی ہے۔

مزید پڑھیں

loading...

  وقت اشاعت: 30 جنوری 2017

برسلز شہر کی کئی  شناخت ہیں۔ یہ بیلجیئم کا دارلحکومت ہے۔ یہاں نیٹو کا ہیڈ کواٹر بھی ہے۔ اور یہ یورپین پارلیمنٹ کی آماجگاہ بھی۔ یعنی یورپین یونین کا دراحکومت۔ وہ ملک جو کبھی تقسیم ہوا تو کبھی زیر نگیں رہا۔ آج  انہی تمام ملکوں کا دارالحکومت ہے جو کبھی اس کی شکست و ریخت کے ذمہ دار تھے۔ اس لحاظ سے یہ ایک عالمی رابطے کا شہر ہے۔ گزشتہ دنوں یہاں کا پریس کلب ایسے ہی عالمی رابطے کے مرکز بنا ہوا تھا۔ 

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 17 2016

سال رواں میں آٹھ اگست کو کوئٹہ میں بلوچستان ہائی کورٹ بار کے صدر پر حملے کے بعد سول ہسپتال میں خود کش حملہ ہوا تھا۔ جس میں بلوچستان کی وکلا برادری کی تمام سینئر قیادت سمیت 70افراد جاں بحق ہوئے تھے۔ اس المناک سانحہ کی تحقیق کے لئے ایک رکنی جوڈیشل کمیشن بنایا گیا تھا۔ کل اس کمیشن کی طرف سے110صفحات پر مشتمل رپورٹ جاری کی گئی ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 12 2016

آج کے اخبارات میں  چیف جسٹس آف پاکستان سمیت دیگر معزز جسٹس صاحبان کی تقاریر پڑھیں جو انہوں نے لاہور ہائی کورٹ کے150 سالہ تقریبات کے حوالے سے منعقدہ ایک تقریب میں کی تھیں۔ میں وہ سب پڑھ کر بہت شرمندہ ہوا اور بغلیں جھانکنے لگا تھا۔ پاکستان میں انقلاب اب صرف ایک عام پاکستانی کی سوچ میں تبدیلی اور ووٹ کے صحیح استعمال سے ہی ممکن ہے۔ قانون کا احترام کیا ہوتا ہے اور انصاف کیسے دیا جاتا ہے اس کو سمجھنے کے لئے یہ واقعہ پڑھیں جو اس ملک میں سرزد ہوا تھا جس کی مخالفت کرکے پاکستان میں گندی سیاست کی جا رہی ہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 09 2016

10دسمبر کو ہر سال دنیا بھر میں انسانی حقوق کا عالمی دن منایا جاتا ہے اس دن کے منانے کا بنیادی مقصد لوگوں کو یہ بتانا مقصود ہوتا ہے کہ ان کے حقوق کیا ہیں اور یہ کہ دنیا میں تمام انسان عزت ، احترام ، بنیادی حقوق ، عدل و انصاف ، رنگ و نسل اور ذات کے حوالے سے برابر ہیں۔ ان کے ساتھ ہی کسی بھی ریاست میں صنفی یا عقیدہ کی بنیاد پر امتیازی سلوک روا نہیں رکھا جا سکتا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 08 2016

کیا خوب زمانہ تھا۔ کبھی کہ ہر محلے میں ایک دادا ہوا کر تا تھا ۔ دادا اس بدمعاش کو کہتے تھے جس کی پولیس کے زیر سر پرستی محلے میں دادا گیری چلتی تھی۔ سب کو پتہ ہوتا تھا کہ بھئی وہ دادا ہے۔ اور کسی کو اس کے سامنے چوں چراں کر نے کی ہمت نہیں ہوتی تھی۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 04 2016

شعر کیا ہوتا ہے اور کب اور کیسے کہا جاتا ہے۔ اس بارے ادب کی تاریخ میں بہت کچھ محفوظ ہے۔ سب جانتے ہیں کہ شعروسخن سے انسانی جذبات و احساسات کا اظہار ہوتا ہے۔ انسانی تاریخ گواہ ہے کہ ہر دور میں انسان خوشی و غم کی کیفیت سے دوچار رہا ہے اور انہی کیفیت کے اظہار کے لئے انسان نے  اپنی اپنی زبان کو استعمال کیا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آج دنیا میں ہر زبان میں شعر کہے جاتے ہیں۔ کہنے والوں میں مرد اور عورت دونوں شامل ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 23 2016

کہتے ہیں کہ ہاتھی کے دانت کھانے کے اور دکھانے کے اور ہوتے ہیں۔ انسانوں پر بھی یہ بات اس طرح سے صادق آتی ہے کہ انسانی دانت نکالنے کے اور چبانے کے اور۔ چونکہ نکوسنے کے دانت سے انسان چبا نہیں سکتا۔ اور دانت کے معاملے میں انسان ہاتھی سے زیادہ شرارتی واقع ہواہے۔

مزید پڑھیں

Threat is from inside

Army Chief General Raheel Sharif assured the nation that country’s borders are secure and the army is aware of threats and intrigues of the enemies. Speaking at an even

Read more

loading...