شہر شہر


  وقت اشاعت: 2 دن پہلے 

گزشتہ پانچ دنوں میں وطنِ عزیز کی پاک سرزمین کو دہشت گردوں نے خون سے لال کردیا ہے۔ دہشت گردوں نے ملک کے تینوں صوبوں کو دہشت گردی کا نشانہ بنا کر ہمارے قانون نافذ کرنے والے اداروں اور انتظامیہ کو کھلا چیلنج دیا ہے۔ دہشت گردوں نے پہلے صوبہ پنجاب میں زندہ دلانِ لاہور کو سوگ میں مبتلا کیا۔ ابھی اس حملہ کی گھتی نہیں سلجھ سکی تھی کہ خیبر پختون خواہ دلخراش چیخوں سے گونج اٹھا۔ ان چیخوں کی خراشوں سے ابھی لہو رس ہی رہا تھا کہ سندھ کے شہر اور صوفی حضرت لال شہباز قلندر کے حوالے سے جانا جانے والے شہر سہون شریف کو دہشت گردوں نے خون سے لال کر دیا۔ ایک اندازے کے مطابق اب تک ان دھماکوں میں جاں بحق ہونےوالوںکی تعداد 150 کے لگ بھگ ہے۔  اس سے تین گنا زیادہ تعداد زخمی ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 3 دن پہلے 

15فروری کو تخلیق کاروں کی ایک شان دار تقریب میں شرکت کا موقع ملا۔ اس سے صرف ایک دن قبل تخریب کاروں نے لاہور کو اپنی تخریب کاری کا نشانہ بنایا۔ ایسا سماج جہاں تخریب کاروں کی یہ کوشش ہو کہ وہ تخریب کے ذریعے، تخلیق اور تعمیر کو روک کر اپنی رجعتی اور تخریبی سوچ کو مسلط کرلیں گے، ایسے میں تخلیق کاروں کی یہ تقریب اس پاکستان کا ہراول دستہ ہے جو سماج کو علامہ اقبالؒ اور قائداعظمؒ محمد علی جناح کی فکروفلسفے کے مطابق ایک فلاحی سماج میں بدلنا چاہتے ہیں۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 4 دن پہلے 

منظر بدلنے پر آئے تو دیر ہی کتنی لگتی ہے۔ اور منظر اگر درد کی طرح ٹھہر جائے تو وقت کے پل پھیل کر سالوں، دِہایوں اور صدیوں کو حنوط کر دیتے ہیں۔
لاہور کے ایک ہوٹل کے وسیع ہال میں کھچا کھچ بھرے ہال میں شہر کے نامی گرامی صحافی، میڈیا پرسنز، کالمسٹس، سابق جرنیل، سابق سفارتکار اور کئی سیاست دان جمع تھے۔ سننے سے کہیں زیادہ سنانے پر اصرار تھا۔ موضوع ہی کچھ ایسا تھا کہ سنانے والے زیادہ بے تاب تھے۔

مزید پڑھیں

loading...

  وقت اشاعت: 14 فروری 2017

 پنجاب کے وزیراعلیٰ شہباز شریف کا خاندان اسّی کی دہائی کے آغاز سے اقتدار داخل ہوا۔ اُن کا بچپن اور جوانی، پنجاب کے انمول شہر لاہور میں گزرا۔ اس شہر اور پنجاب کی سرزمین کے اُن کے خاندان پر جو احسانات ہیں، ان کو یقینا اس کا احساس ہوگا۔ امرتسر سے ہجرت کرکے لاہور آباد ہونا، شہر لاہور میں ایک معمولی کاروبار سے صنعت کار بننا، اسی شہر لاہور کا مرہون منت ہے۔  پھر اسی سرزمین پنجاب نے اُن کو اور اُن کے اہل خانہ کو اقتدار کے اس عروج پر پہنچایا جس پر پاکستان کا کوئی خاندان رسائی حاصل نہ کرسکا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 11 فروری 2017

اپنی پڑھائی سے فرصت پاتے ہی جب ایک نجی تعلیمی ادارے سے وابستگی اختیار کی تو ٹیسٹ اور انٹرویو کے بعد سب سے پہلی کلاس جو پڑھانے کا مجھے شرف حاصل ہوا وہ کلاس تو نہیں البتہٰ اس ادارے کے بگڑے ہوئے لڑکوں کا ایک ایک ایسا جتھا تھا جسے کوڑھ کے مریضوں کی طرح پورے ادارے سے الگ تھلگ رکھا گیا تھا ۔ سٹاف روم سے ادھر ادھر کی آوازوں سے انتظامیہ کی رچی ہوئی اس سازش کی بھنک پڑی کہ ہر نئے آنے والے کی مستقل مزاجی اور قوت برداشت کی آزمائش کے لئے اسے پہلے  اس پرکالہء آتش کلاس میں بھیجا جاتا ہے۔ اگر وہ ان اوصاف کا مظاہرہ کر پائے اور اس میں دیگر تدریسی جواہر بھی ایک خاص درجے سے ذیادہ پائے جائیں تو اسے محض اعلیٰ کلاسوں کے لئے وقف کر دیا جاتا ہے۔ 

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 11 فروری 2017

جماعت اسلامی پاکستان کی سب سے منظم جماعت کی تاریخ رکھتی ہے۔ مولانا مودودی مرحوم نے اس جماعت کے قیام سے خطے میں اسلامی انقلاب کا بیڑا اٹھایا۔ جماعت اسلامی، سیاست کے ساتھ ساتھ مسلمانوں میں اسلامی شعار کی ترویج کا بھی دعویٰ کرتی چلی آئی ہے۔ مولانا مودودی مرحوم سیاسی دانشور، سیاسی رہنما، ادیب، مصنف اور مذہبی سکالر تھے۔ وہ قلم و عمل کے ذریعے اپنے نظریات، فکر اور سیاسی جدوجہد کے لیے تادمِ مرگ متحرک رہے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 10 فروری 2017

ہمارا علم مشاہدے اور پچھلے علم کی بنیاد پر آگے بڑھتا ہے۔ موسم کی پیش گوئی ہو یا انسانی مزاج آشنائی کی کوشش، گذشتہ علم اور تجربے کی سیڑھی پر کھڑے ہو کر کل میں جھانکنے کی کوشش ہمارا معمول ہے۔ انسانی تاریخ اور معاشرت کا سفر مگر ایک لگے بندھے دائرے میں نہیں ہوتا ۔ انہونی اور خلاف معمول تاریخ کا معمول ہے۔ ناگزیر ہستیاں ہوں یا وقت کی طاقتور تہذ یبیں، جن کے بغیر زندگی اور قیادت کا تصور محال تھا، وقت کی دھول بیٹھتی ہے تو ان کی تصویر یاد کرنا بھی محال ہو تا ہے۔ حضرت علی سے منسوب ایک قول میں اس گورکھ دھندے کی گرہ یوں کھولی گئی : میں نے اپنے ارادوں کی شکست و ریخت سے اللہ کو پہچانا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 06 فروری 2017

میکالے کی تعلیمی سفارشات پر بحث کرنے سے قبل ضروری معلوم ہوتا ہے کہ اس پس منظر کا ایک طائرانہ جائزہ لے لیا جائے جس میں اس پالیسی کا ظہور ہوا تھا۔ 1615 میں سر ٹامس رو برطانوی بادشاہ جیمز اول اور ایسٹ انڈیا کمپنی کے مشترکہ سفیر کی حیثیت سے برطانوی بادشاہ کا مغل شہنشاہ نورالدین جہانگیر کے نام مراسلہ لے کر ہندوستان وارد ہوا۔ وہ خود فارسی سے نابلد تھا اور اسے ایک مترجم کی تلاش تھی۔ تاہم ایسا مترجم ندارد تھا جو انگریزی سے فارسی میں ترجمہ کر سکے۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 05 فروری 2017

مشرق اور مغرب کے باہمی تفاوت کا بڑا سبب اقتصادی و تہذیبی تمدن کی وہ گہری خلیج ہے جو ان دونوں خطوں کے درمیان حائل ہے۔ اور جو فی الحال ختم ہوتی دکھائی نہیں دیتی ۔  مغرب کی ترقی کا سفر تقریباً سولہویں صدی سے شروع ہوا۔ اس دور میں سائنس کی ترقی سے دریافت اور تحقیق و جستجو کی راہیں ہموار ہوئیں۔ اس نے مادی ترقی کے ساتھ ساتھ انسان کے افکار اور انداز معاشرت کو بھی بدل کے رکھ دیا۔

مزید پڑھیں

  وقت اشاعت: 03 فروری 2017

تیس بتیس سال پرانی بات ہے لیکن حافظے میں کل کی بات کی طرح نقش ہے۔ ان دنوں ہم کراچی میں مقیم تھے۔ پاک بھارت تعلقات میں ابھی سرد مہری نہ آئی تھی۔ میل ملاپ کے لیے رشتہ داروں سمیت شعراء اور ادیبوں کا خاصا آنا جانا لگا رہتا۔ انہی دنوں ہم نے ایسی محفلوں میں سیّد ابوالحسن ندوی کی شبنم لہجے میں گھلی گفتگو بھی سنی اور کیفی اعظمی کی گرجدار آواز اور طرحدار انداز میں ان کی شاعری بھی ۔

مزید پڑھیں

Threat is from inside

Army Chief General Raheel Sharif assured the nation that country’s borders are secure and the army is aware of threats and intrigues of the enemies. Speaking at an even

Read more

loading...