دوپتیاں گلاب کی

پھولوں کے اس ڈھیر سے بچھڑی وہ گلاب کی پتی میرے منہ پر آکر چپک گئی

ارے میں نے اسے پکڑا تو وہ مہک اٹھی

دن بھر کی تکان اسے زندگی کے آخری لمحوں پر لے آئی تھی
مگر وہ گلنار ہورہی تھی
خوشی سے سرشار تھی
فخر سے مسحور تھی
 
میں نے اسے دیکھا تو میں مسکرانے لگا
کیوں ایسا کیا ہوا بی بی
تم اتنا گلنار ہورہی ہے
 
کیا تم وہاں تھے۔ اس نے میرا سوال نظرانداز کیا اور مجھ سے استفسار کرنے لگی
کہاں؟ میں حیران سا ہوا
ارے تم نہیں جانتے۔ وہاں تو پورا شہر امڈ آیا تھا، وہ ایک سیلاب تھا
ایک صدا تھی اور ایک للکار تھی
 
وہاں، وہ ہاں، میں وہاں نہیں تھا
میں ذرا مصروف تھا۔ مگر میں نے سنا ہے اور خبریں مجھ تک پہنچی ہیں
اس ننھی سی، مرجھارہی گلاب کی پتی نے
مجھے گھورا، گویا وہ مجھے شرمندہ کررہی ہو
 
اوہ......... وہ گویا ہوئی
وہاں کون نہیں تھا۔ وہاں سب تھے
اور وہاں اندھیرے ا ور تاریکی کو بھگانے کے لئے قوس وقزح کے سارے رنگ تھے
ننھی سی پتی میرا جواب بھول چکی تھی
وہ اپنے تجربے میں سرمست تھی
 
تم جانتے ہو۔ وہ پھر بولنا شروع ہوئی
میں بھی اس باغ وبہار پھول کے عظیم الشان ڈھیر کا حصہ تھی جوآگ بجھانے کے لئے ان لوگوں نے وہاں اکٹھا کیا تھا
وہ نفرت کی آگ کو پھولوں سے بجھا گئے ہیں
وہ تعصب کی للکار کو نغموں کی صدا میں دبا کر گئے ہیں
انہوں نے ہاتھ تھام کر دہشت اور خوف کے سب پیغام بروں کا منہ بند کردیا تھا
میں اس تاریخ ساز لمحہ کی امین ہوں
 
تم سوچتے ہو میں مررہی ہوں
میں تو دائمی زندگی کے سفر پر ہوں
میں اس گلزار کا حصہ بنی ہوں جو نفرت کے الاﺅ میں پھول اگاتا ہے
میں نے احترام سے اس پتی کو مٹھی میں دبالیا اور انکھیں موند لیں
 
میں نے ایک قدم بڑھایا ہی تھا کہ زمین پر کچلی مسلی ایک پریشان گلاب کی پتی زندگی کی آخری سانسیں لے رہی تھی
میں نے جھک کر اسے اٹھالیا اور اس کا تنفس بحال کرنے کی کوشش کی۔
مجھے چھوڑ دو۔ مجھے مرنے دو۔ مجھے اس جہنم سے جانا ہے۔
نہ اتنی مایوس کیوں ہوتی ہو۔
 
تم نہیں جانتے
ان طالموں نے اپنے کریہہ عزائم کے لئے کیسے مجھے اپنے پھول سے نوچ لیا اور اس شخص کے راستے میں بچھادیا جو اپنے ہی لوگوں کے حق حکمرانی کے لئے تہمت بنا ہوا ہے۔
میں نے حیرانی سے اسے دیکھا تو اس نے سسک کر آخری سانس لی۔
 
گلاب کی یہ دو پتیاں سدھار چکی تھیں
دونوں میری مٹھی میں دبی تھیں۔
ایک مہک رہی تھی دوسری غم اور غصے سے دہک رہی تھی۔
 
میں نے سوچا
پھول کی یہ دو پتیاں
دو جگ اور دو جہانوں کی کہانیاں ہیں۔
 
loading...