روس نے کورونا وائرس کی ویکسین تیار کرنے کا اعلان کردیا

  • بدھ 12 / اگست / 2020
  • 1210

روس کے صدر ولادی میر پوٹن نے دعویٰ کیا ہے کہ روس کورونا وائرس کےخلاف نئی ویکسین کے استعمال کی باضابطہ اجازت دینے والا دنیا کا پہلا ملک بن گیا ہے۔ تاہم اس دعویٰ کی تصدیق کے لئے کوئی  مستند ڈیٹا پیش نہیں کیا گیا۔

روسی صدر نے منگل کو کابینہ کے اجلاس کے بعد سرکاری ٹی وی پر براہ راست نشر ہونے والی تقریر میں اس پیش رفت سے آگاہ کیا۔ صدر پوٹن نے کہا کہ "میں جانتا ہوں کہ ماسکو کے گیمیلیا انسٹی ٹیوٹ کی تیار کردہ یہ ویکسین فوری اثر کرتی ہے اور اس سے کورونا کے خلاف قوات مدافعت ملتی ہے۔"

روسی صدر کا کہنا تھا کہ ویکسین کی منظوری تمام ضروری مراحل پورے کرنے کے بعد دی گئی ہے اور یہ بالکل محفوظ ہے۔ اُنہوں نے بتایا کہ اُن کی اپنی بیٹی کو ہلکے بخار کی علامات پر یہ ویکسین دی گئی اور اگلے ہی روز بخار اُتر گیا۔ نئی ویکسین کا نام 'اسپتنک فائیو' رکھا گیا ہے جو 1957 میں اس وقت کے سوویت یونین کی جانب سے خلا میں بھیجا جانے والا پہلا مشن تھا۔

روسی حکام کا کہنا ہے کہ اس ویکسین کی پیداوار آئندہ ماہ سے شروع کر دی جائے گی تاہم اس کی وسیع پیمانے پر تیاری اکتوبر سے شروع ہو گی۔ ادھر امریکہ کے وزیر صحت ایلکس آزر کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس کے خلاف سب سے پہلے ویکسین تیار کرنے کے دعوے کے بجائے زیادہ اہم یہ ہے کہ ایک محفوظ اور موثر ویکسین تیار کی جائے۔

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) نے کہا ہے کہ روس کی جانب سے تیار کی جانے والی ویکسین تیسرے مرحلے کی آزمائش سے نہیں گزری جس میں ویکسین کے ہزاروں افراد پر ٹرائل کے علاوہ اسے مہینوں تک جانچا جاتا ہے۔ روسی اور کچھ غیر ملکی سائنس دانوں نے بھی تیسرے مرحلے کے ٹرائل سے قبل ہی ویکسین کی منظوری پر سوال اُٹھائے ہیں۔

تائیوان کے دورے پر موجود امریکی وزیر صحت سے جب روس کے دعوے سے متعلق پوچھا گیا تو اُن کا کہنا تھا کہ مسئلہ سب سے پہلے ویکسین تیار کرنے کا نہیں ہے۔ اُن کے بقول ایک ایسی ویکسین تیار ہونی چاہیے جو امریکی عوام اور دنیا بھر کے لوگوں کے لیے محفوظ اور موثر ہو۔

نئی روسی ویکسین اُن سو سے زیادہ ویکسینز میں سے ایک ہے، جسے اس وقت دنیا کے مختلف ممالک اور بائیو میڈیکل کمپنیاں تیار کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔ امریکہ کی جانز ہاپکنز یونیورسٹی کے مطابق دنیا بھر میں کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد دو کروڑ سے بڑھ چکی ہے اور اب تک یہ وائرس سات لاکھ 26 ہزار سے زائد افراد کی جان لے چکا ہے۔

loading...