ایران، امریکہ کے ساتھ کشیدگی ختم کرنے پر متفق ہے: امیرِ قطر

  • سوموار 13 / جنوری / 2020
  • 700

ایران کے صدر حسن روحانی اور امیرِ قطر شیخ تمیم بن حماد الثانی کے درمیان ہونے والی ملاقات میں دونوں رہنماؤں نے ایران امریکہ کشیدگی کے خاتمے پر اتفاق کیا ہے۔

امریکہ اور ایران کے درمیان 10 روز سے جاری کشیدگی کے بعد تہران نے اشارہ دیا ہے کہ وہ واشنگٹن کے ساتھ مزید کشیدگی نہیں چاہتا۔ 'اے ایف پی' کے مطابق امیر قطر کا کہنا ہے کہ ایرانی صدر حسن روحانی کے ساتھ ان کی ہونے والی ملاقات کے دوران اس بات پر اتفاق کیا گیا ہے کہ خطے میں کشیدگی کے خاتمے کا واحد حل تناؤ میں کمی لانا ہے۔

ایران کا دورہ کرنے والے امیر قطر کا مزید کہنا تھا کہ ہر فریق کو مذاکرات کا حصہ بننا ہوگا۔ کیوں کہ کشیدگی کا خاتمہ اسی سے ممکن ہے۔ صدر حسن روحانی کا اس ملاقات کے حوالے سے کہنا ہے کہ "خطے کی مجموعی سیکیورٹی کے لیے ہم نے مزید مشاورت اور تعاون پر اتفاق کیا ہے۔"

امیر قطر کے علاوہ اتوار کو پاکستان کے وزیرِ خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھی تہران کا دورہ کیا تھا۔ انہوں نے صدر حسن روحانی سے ملاقات کی جس کے دوران امریکہ اور ایران کے درمیان حالیہ کشیدگی سمیت دیگر امور پر بات چیت کی گئی۔ امیرِ قطر اور پاکستان کے وزیرِ خارجہ کے دورۂ ایران کو سفارتی حلقوں میں خاصی اہمیت دی جا رہی ہے۔

اتوار کو جاپان کے وزیرِ اعظم شنزو ایبے اور سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے بھی خبر دار کیا تھا کہ ایران کے خلاف فوجی کارروائی کے اثرات عالمی امن اور استحکام کے لیے خطرہ ہیں۔ امریکہ اور ایران کے درمیان جاری کشیدگی کے اثرات عراق میں بھی دیکھی جا رہے ہیں۔ اتوار کو عراقی ایئربیس 'البلد' پر راکٹ حملے ہوئے جس میں عراقی فوج کے چار افسران سمیت دیگر دو زخمی ہوئے۔

امریکی وزیرِ خارجہ مائیک پومپیو کا عراقی بیس پر حملے پر اپنے ایک ٹوئٹ میں کہنا تھا کہ عراقی ایئربیس پر ہونے والے مسلسل حملے عراق کی خود مختاری کی خلاف ورزی ہیں۔ یہ کارروائیاں ان کی جانب سے کی جا رہی ہیں جو عراقی حکومت کے وفادار نہیں ہیں اور ان حملوں کا خاتمہ ہونا چاہیے۔

loading...