یوکرین طیارہ حادثہ، انصاف ملنے تک چین سے نہیں بیٹھیں گے: ٹروڈو

  • سوموار 13 / جنوری / 2020
  • 720

کینیڈا کے وزیرِ اعظم جسٹن ٹروڈو نے کہا ہے کہ وہ ایران کے میزائل سے تباہ ہونے والے یوکرین کے مسافر طیارے میں ہلاک افراد کے لواحقین کے لیے انصاف اور احتساب کا حصول ممکن بنانے کی کوشش جاری رکھیں گے۔

سانحے میں 57 کینیڈین نژاد ایرانی ہلاک ہوئے تھے۔ یہ گزشتہ 40 سال میں کینیڈا کے شہریوں کی ایک ساتھ ہلاکت کی سب سے بڑی تعداد ہے۔ کینیڈا کے مغربی صوبے البرٹا کے شہر ایڈمنٹن میں ایک جمنازیم میں 2300 افراد کا اجتماع ہوا۔ البرٹا کے 13 افراد جہاز کے تباہ ہونے سے ہلاک ہوئے تھے ان میں سے اکثر کا تعلق البرٹا یونیورسٹی سے تھا۔

البرٹا میں اجتماع میں شرکت کے دوران جسٹن ٹرڈو نے کہا کہ ممکن ہے کہ آپ خود کو ناقابل برداشت حد تک تنہا محسوس کریں لیکن آپ لوگ تنہا نہیں ہیں۔ آپ کا پورا ملک آج، کل اور آئندہ برسوں میں آپ کے ساتھ کھڑا ہے۔ جسٹن ٹرڈو کا مزید کہنا تھا کہ یہ سانحہ نہیں ہونا چاہیے تھا۔

انہوں نے وہاں موجود افراد کو یقین دلایا کہ آپ کو اس مشکل وقت میں میری غیر معمولی حمایت حاصل رہے گی۔ گزشتہ ہفتے یوکرین کا مسافر طیارہ تہران سے 'کیو' جا رہا تھا کہ پرواز کے کچھ ہی منٹ بعد تہران کے مضافات میں گر کر تباہ ہو گیا تھا۔ حادثے میں تمام 176 مسافر ہلاک ہوئے تھے۔ ایران نے مسلسل انکار کے بعد ہفتے کو اعتراف کیا تھا کہ اس نے غلطی سے یوکرین کا طیارہ تباہ کیا۔

ایرانی فوج کے بیان میں کہا گیا تھا کہ طیارہ پاسدران انقلاب کی حساس تنصیبات کے قریب سے گزر رہا تھا، جسے غلطی سے مار گرایا گیا۔ غلطی کے مرتکب افراد کے خلاف عدالتی کارروائی کی جائے گی۔

سانحے میں ہلاک ہونے والے افراد کے لواحقین سے خطاب میں جسٹن ٹروڈو کا مزید کہنا تھا کہ آپ لوگوں نے ہمیں ایک مقصد دیا ہے کہ آپ لوگوں کے لیے انصاف اور احتساب کو ممکن بنایا جائے۔ جسٹن ٹروڈو نے کہا کہ ہم اس وقت تک چین سے نہیں بیٹھیں گے جب تک وہ ہمارے سوالات کے جواب نہیں دے دیتے۔

طیارہ تباہ کرنے کے ایران کے اعتراف کے بعد یوکرین کے صدر ولادی میر زیلنسکی نے واقعے کی مکمل تحقیقات اور متاثرین کو معاوضہ دینے کا مطالبہ کیا تھا۔ یوکرینی طیارہ مار گرانے کے اعتراف کے بعد ایران میں مظاہرے شروع ہو گئے ہیں اور گزشتہ دو روز کے دوران شہری ہلاک ہونے والے افراد کی یاد میں مختلف مقامات پر جمع ہوئے اور موم بتیاں روشن کیں۔

احتجاج میں شریک مظاہرین ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای سے مستعفی ہونے کا مطالبہ  کر رہے تھے۔ وہ نعرے لگا رہے تھے کہ "جھوٹوں کو اقتدار سے نکالو اور آمروں کو پھانسی دو۔"

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ امریکہ بہادر ایرانی عوام اور طویل عرصے سے ظلم برداشت کرنے والے لوگوں کے ساتھ کھڑا ہے۔ ایران کی حکومت کے خلاف ہونے والے مظاہروں پر کڑی نظر رکھے ہوئے ہیں۔ مظاہرین پر کسی قسم کا ظلم برداشت نہیں کریں گے۔

loading...