پاکستان کو فیصلہ کن اقدامات کرنے ہوں گے: آئی ایم ایف

  • ہفتہ 21 / ستمبر / 2019
  • 350

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ نے کہا ہے کہ پاکستانی حکومت کے اقتصادی پروگرام کا آغاز حوصلہ افزا ہے لیکن مضبوط اور پائیدار ترقی کے لیے فیصلہ کن نفاذ ضروری ہوگا۔

 آئی ایم اف کے مشرق وسطیٰ اور وسطی ایشیا کے ڈائریکٹر جہاز ازعور کی قیادت میں آئی ایم ایف کے وفد نے پاکستان کا 5 روزہ دورہ کیا۔ دورے کے بعد جاری ہونے والے اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ مشن اکتوبر میں پھر پاکستان آئے گا اور 6 ارب ڈالر کے توسیعی فنڈ سہولت کی پہلی سہ ماہی کا باضابطہ طور پر جائزہ لے گا۔

مشن نے کہا کہ پاکستان کے معاشی پروگرام کا  آغاز اچھا ہے لیکن مضبوط اور پائیدار ترقی کے لیے راہ ہموار کرنے کے لیے فیصلہ کن اقدامات ناگزیر ہیں۔ پاکستانی معیشت کے لئے مقامی اور بین الاقوامی خطرات ابھی بھی باقی ہیں۔ حکومت کو اپنے اصلاحی ایجنڈے کے ساتھ آگے بڑھنے کی ضرورت ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ مشن نے ارنیستو رمیریز ریگو کی سربراہی میں 16 سے 20 ستمبر تک اسلام آباد اور کراچی کا دورہ کیا اور ای ایف ایف کے آغاز کے بعد سے معاشی پیش رفت کا جائزہ لیا اور اقتصادی پالیسیوں کے عملدرآمد کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال کیا۔ مشن کا کہنا ہے کہ پاکستان کا اقتصادی اصلاحاتی پروگرام ابھی ابتدائی مراحل میں ہے تاہم کچھ شعبوں میں پیش رفت ہوئی ہے۔

بیان کے مطابق مارکیٹ کے طے شدہ ایکسجینچ ریٹ کی منتقلی نے بیرونی توازن پر مثبت نتائج ڈالنا شروع کئے ہیں، ایکسچینج ریٹ میں اتار چڑھاؤ کم ہؤا ہے، افراط زر کو کنٹرول کرنے کے لیے مانیٹری پالیسی مدد کر رہی ہے اور اسٹیٹ بینک پاکستان نے غیرملکی زرمبادلہ کے ذخائر میں بہتری کی ہے۔

ٹیکسز کے ساتھ ٹیکس محصولات کی وصولی میں نمایاں بہتری کا بھی ذکر کیا گیا جو برآمد کنندگان کی رقوم کی واپسی میں ترقی ظاہر کر رہا ہے۔ فیڈرل بورڈ آف ریونیو  ٹیکس انتظامیہ اور ٹیکس دہندگان کے ساتھ رابطے کی بہتری کے لیے نمایاں اقدام اٹھا رہا ہے۔

آئی ایم ایف مشن نے کہا کہ پروگرام کی منظوری کے وقت سے میکرواکنامک نقطہ نظر میں بڑے پیمانے پر کوئی تبدیلی نہیں کی گئی۔ مالی سال 20-2019 میں شرح نمو 2.4 فیصد تک متوقع ہے تاہم آنے والے مہینوں میں افراط زر میں کمی اور موجود اکاؤنٹ کا اس سے کہیں زیادہ تیزی سے ایڈجسٹ ہونا متوقع ہے۔

آئی ایم ایف کے پاکستان، مشرق وسطیٰ اور وسط ایشیا کے مشن کے سربراہ ارنیستو رمیریز ریگو نے وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب خان سے بھی ملاقات کی اور ملک میں توانائی کے شعبے میں اصلاحات پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے اسے حوصلہ افزا قرار دیا۔

loading...