عمران خان کا وقت پورا ہوچکا، جلد انجام کو پہنچنے والے ہیں: نواز شریف

  • جمعرات 13 / جون / 2019
  • 570

تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ عمران خان کا وقت پورا ہوچکا ہے اور وہ جلد اپنے انجام کو پہنچنے والے ہیں۔

کھوٹ لکھپت جیل میں سزا کاٹنے والے نواز شریف نے جیل میں لیگی کارکنوں سے ملاقات کے بعد گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ عمران خان نے ملک کی معیشت کا بیڑا غرق کردیا ہے۔ انہیں شرم آنی چاہیے۔

وزیر اعظم پر تنقید کرتے ہوئے نواز شریف کا کہنا تھا کہ عمران نیازی کے پاس عوامی مینڈیٹ نہیں، وہ اپنی ناقص پالیسیوں اور انتقامی سیاست کے باعث ہٹ وکٹ ہوچکے ہیں۔ ہم نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کو خیرباد کہا مگر عمران خان کشکول لے کر ان کے پاس چلے گئے۔

انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نے ملک میں مہنگائی کو نکیل ڈال کر رکھی تھی۔ ہمارے دور میں روپے کی قدر مستحکم اور تیل کی قیمتیں کم تھیں لیکن سلیکٹڈ وزیر اعظم کی ناقص پالیسیوں سے عوام پریشان ہیں۔ عمران خان کی نااہلی نے ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچادیا ہے۔ ملک کی معیشت کا جنازہ نکل رہا ہے۔ کوئی پوچھنے والا نہیں ہے۔

سپریم کورٹ سے نااہل ہونے والے تحریک انصاف کے رہنما جہانگیر ترین کے بارے میں نواز شریف نے کہا کہ جہانگیر ترین سمیت دیگر بدعنوان لوگ عمران خان کی اپنی جماعت میں ہیں جبکہ حکومت کے بہت سارے وزراکرپشن میں ملوث ہیں لیکن کوئی نہیں دیکھ رہا۔

نواز شریف نے کہا کہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے عمران خان کو منہ نہیں لگایا۔ نہ وہ ان کا فون سنتے ہیں اور نہ حلف برداری میں بلاتے ہیں۔ ہمارے دور میں نریندر مودی اور اٹل بہاری واجپائی پاکستان آئے۔ اپوزیشن رہنما اور سابق صدر آصف علی زرداری اور اپنے بھتیجے حمزہ شہباز کی گرفتاری پر تبصرہ کرتے ہوئے نواز شریف کا کہنا تھا کہ ان لوگوں کی گرفتاری بلاوجہ اور انتقامی کارروائی ہے۔ عوام جانتے ہیں کہ کیا ہورہا ہے۔

دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے رہنما اور سابق وزیر قانون پنجاب رانا ثنا اللہ نے جیل کے باہر میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ موجودہ بجٹ حکومت کا نہیں بلکہ آئی ایم ایف کا ہے۔ یہ بین الاقوامی اسلام دشمن ملکوں کا ایجنڈا تھا کہ پاکستان کی خود مختاری کو ختم کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ جعلی مینڈیٹ کے حامل کٹھ پتلی حکمران کو پاکستان میں لایا گیا ہے جبکہ جعلی سازی سے بنائی گئی حکومت کے پاس پارلیمنٹ میں ووٹ نہیں ہے۔ رانا ثنااللہ نے کہا کہ 30 جون کو یہ بجٹ بھی پاس نہیں ہوگا اور حکومت کے خلاف عدم اعتماد بھی ہوجائے گا۔

وزیر اعظم عمران خان پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ تکبر سے بھرا حکمران رات 12 بجے بھی قوم کو تقسیم کرتا ہے اور نفرت پھیلاتا ہے۔ اگر کمیشن بنانا ہے تو سپریم کورٹ کے معزز جج کی سربراہی میں بنایا جائے اور یہ کمیشن موجودہ حکومت کے 10 ماہ میں 5 ہزار ارب روپے کے قرضوں کی تحقیقات شروع کرے، اس کے ساتھ ساتھ اس کمیشن میں شامل کیے جانے والے افراد کی پارلیمنٹ سے منظوری لی جائے۔

ادھر لیگی رہنما نہال ہاشمی نے بھی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ 60 روپے فی لیٹر پیٹرول دینے والا، لوگوں کے اندھیرے کم کرنے والا، لیپ ٹاپ دینے والا، موٹرویز بنانے والا جیل میں جبکہ 113 روپے لیٹر پیٹرول کرنے والا باہر ہے۔

نہال ہاشمی کا کہنا تھا کہ یہ بجٹ پاکستان کے عوام نے رد کردیا ہے۔ پاکستان کا ہر آدمی ٹیکس دیتا ہے اور پاکستانیوں سے زیادہ کوئی ٹیکس نہیں دیتا لیکن بے نامی وزیر اعظم کہتے ہیں کہ پاکستانی ٹیکس نہیں دیتے۔ میں عمران خان سے پوچھتا ہوں کہ آپ نے کتنا ٹیکس دیا، یہ بتایا جائے۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے دور میں کبھی واجپائی آنے کا کہتے تھے تو کبھی نواز شریف کو حلف میں بلایا جاتا تھا لیکن اب تو بھارت سے کوئی دعوت نامہ نہیں آتا۔

loading...