پیپلز پارٹی عید کے بعد عوامی تحریک چلائے گی: آصف زرادری

  • بدھ 15 / مئ / 2019
  • 890

سابق صدر اور پیپلز پارٹی کے معاون چئیر مین آصف زرداری نے عیدالفطر کے بعد حکومت کے خلاف تحریک چلانے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ کہ ملک کی معیشت اور نیب ساتھ ساتھ نہیں چل سکتے۔

آصف زرادری نے یہ بات اسلام آباد ہائی کورٹ میں مختلف مقدمات میں ضمانت حاصل کرنے کے لئے پیشی کے دوران میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہی۔ اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے خلاف جاری 6 مقدمات میں عبوری ضمانت منظور کرلی ہے۔ یہ مقدمے نیب نے قائم کئے ہوئے ہیں۔

آصف زرداری اور فریال تالپور کے وکلا ایڈووکیٹ فاروق ایچ نائیک اور سردار لطیف کھوسہ نے ضمانت میں توسیع کی درخواستیں دائر کی تھیں۔ فاروق ایچ نائیک نے عدالت کو بتایا کہ 21 مئی کو احتساب عدالت نے طلب کر رکھا ہے۔

دوران سماعت نیب کے پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ جس کیس میں آصف علی زرداری کے وارنٹ گرفتاری جاری ہوچکے ہیں اس میں جواب جمع کرائیں گے۔ فاروق ایچ نائیک کا کہنا تھا کہ نئے نئے طلبی کے نوٹسز آرہے ہیں، جس پر جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیئے کہ یہ تو لگتا ہے طلبی اور ضمانتوں کا سیلاب آرہا ہے۔ نیب پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ پارک لین کیس کا مقدمہ تیار ہوچکا ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے میگا منی لانڈرنگ کیس میں آصف زرداری کی 22 مئی تک عبوری ضمانت منظور کرلی اور انہیں 5 لاکھ روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا۔

عدالت عالیہ نے آصف زرداری کی جن کیسز یا انکوئریز میں عبوری ضمانت منظور کی یا اس میں توسیع دی، ان میں جعلی اکاونٹس کیس، پارک لین کیس، مشکوک ٹرانزیکشن انکوائری، اوپل 225 انکوئری اور توشہ خانہ ویکل انکوئری سمیت دیگر شامل ہیں۔

عدالت عالیہ نے اوپل 225 انکوائری اور پارک لین کیس میں آصف زرداری کی 12 جون تک عبوری ضمانت منظور کی جبکہ توشہ خانہ ویکل انکوائری میں سابق صدر کی 20 جون تک عبوری ضمانت میں توسیع کردی گئی اور ہریش کمپنی کیس میں ان کی ضمانت میں 29 مئی تک توسیع کردی گئی۔

عدالت نے فریال تالپور کی عبوری ضمانت میں بھی 11 جون تک توسیع کردی۔

سماعت کے بعد عدالت کے باہر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے سابق صدر آصف علی زرداری نے اعلان کیا کہ وہ اب پارلیمنٹ میں نہیں بلکہ سڑکوں پر حکومت مخالف تحریک چلائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ نیب اور معیشت ایک ساتھ نہیں چل سکتی۔ ان کا دعویٰ تھا کہ ماضی کی اور موجودہ ایمنسٹی اسکیم میں کوئی فرق نہیں۔ آصف زرداری کا کہنا تھا کہ جس کے پاس تھوڑے بہت پیسے ہیں وہ بلیک منی کو وائٹ کرلے گا۔

بلاول بھٹو زرداری کی طلبی کے سوال پر سابق صدر نے کہا کہ وہ میرا بیٹا ہے اسے بھی انہی انگاروں پرچلنا ہے۔ بلاول بھٹو شہید بی بی کا بیٹا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ضمانت حاصل کرنا ان کا قانونی حق ہے۔

آصف زرداری نے تحریک انصاف کے رہنما علیم خان کی ضمانت پر رہائی کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے مبارکباد بھی دی۔

علاوہ ازیں اسلام آباد ہائی کورٹ میں میگا منی لانڈرنگ کیس میں اومنی گروپ کے خواجہ انور مجید کے بیٹے علی کمال مجید کی عبوری ضمانت کی درخواست پر سماعت ہوئی اور عدالت نے 22 مئی تک ان کی عبوری ضمانت منظور کرلی اور انہیں بھی 5 لاکھ روپے کے مچلکے جمع کروانے کا حکم دیا۔

loading...